انٹیروگیشن ...!!!

انٹیروگیشن ...!!!

نام کیا ہے ترا ؟؟
زندگی !!
چپ کے اس شہر میں
زندگی جرم ہے
تم پہ اس زندگی کی دفعہ لگتی ہے
کام کیا ہے ترا ؟؟
بندگی !!
اس گناہوں کے بیوپار میں
میرے تھانے کے ہر کوچہ و بازار میں
بندگی جرم ہے
تم پہ اس بندگی کی دفعہ لگتی ہے
گھر کہاں ہے تیرا ؟؟
یہ سڑک یہ گلی !!
تو ذرا دیکھ تو
جسم پر یہ تیرے
خواب کے کتنے مہلک جراثیم ہیں
تو تو ان کو گرا کر چلا جائے گا
اور پھر میونسپلٹی کے آنے تلک
شہر میں یہ وبا پھیل بھی سکتی ہے
تم پہ اک خواب کو بانٹنے کی دفعہ لگتی ہے
آنکھ کے روزنوں میں چھپاتا ہے کیا ؟؟
جی ________وہ ہے روشنی !!
اوہ ----اچھا تو تو چور ہے
تم نے سورج سے کیوں روشنی چوری کی
تم پر دن لوٹنے کی دفعہ لگتی ہے
تم کو اب وقت کی ہتھکڑی لگتی ہے

Image: Fadia Affash


Related Articles

کیلکولیٹر کے ہِندسوں میں چُھپی نظم

یہ گِنتی کی ایجاد سے قبل
حرفوں کی اَبجد کا ایقان ہی تھا
جو روحوں کی تقسیم کو جانتا تھ

پشتون تحفظ موومنٹ (سلمان حیدر)

تم لوگوں کو قتل کرتے رہے یہاں تک کہ احساس تحفظ تمہاری گولیوں کا نشانہ بن گیا تم نے بے

مٹھی بھر جہنم

سدرہ سحر عمران: تم نے مذہب کو گولی سمجھا
اور
ہمارے جنازوں پہ دو حرف بھیج کر
اسلحہ کی دکانیں کھول لی