اوڈ ٹو سموسہ اور دیگر عشرے

اوڈ ٹو سموسہ اور دیگر عشرے

عشرہ -- دس لائنوں پر مبنی شاعری کا نام ہے جس کے لیے کسی مخصوص صنف یا ہئیت، فارم یا رِدھم کی قید نہیں. ایک عشرہ غزلیہ بھی ہو سکتا ہے نظمیہ بھی۔ قصیدہ ہو کہ ہجو، واسوخت ہو یا شہرآشوب ہو، بھلا اس سے کیا فرق پڑتا ہے۔ ادریس بابر

مزید عشرے پڑھنے کے لیے کلک کیجیے۔
Ode to Samosas

پیزا ہٹ اور ڈومینوز کی بحث میں
سموسے والے نظر انداز کیے گئے
جن کے مطابق پیزا بس پیزا ہوتا ہے

جوائس، ٹالسٹائی اور پراؤسٹ میں
نوبیل نہ ملنے کے علاوہ کیا مشترک ہے؟
تینوں نے سموسے نہیں کھائے ہوں گے

فروٹ بائکاٹ پہ منقسم لوگ بھول گئے
سموسہ مہنگا ہونے پر سو موٹو لیا جا سکتا ہے

تب تک ہم لوگ بفے نہیں جائیں گے
جب تک مینیو میں سموسے شامل نہیں کیے جائیں گے

گوڈو کے آ جانے کے بعد

گودو کے آنے کے بعد

ہومر اپنی کہانیوں میں جگہ دے گا
جب آحاب ہمیں اپنی کشتی سے دھکا دے گا

ہم پرانی لائبریریوں میں کھنگالے جائیں گے
جب لڑکے کچھ خط چھپانے آئیں گے

لیکن کیا کوئی ڈرامہ فلموں کا پرستار رہے گا؟

ہم ری ٹویٹ نہیں ہو پائیں گے
ریویوؤر کہتا ہے ہم کلاسک بن جائیں گے

کسی کم قیمت موبائل کی طرح، ہمیں گم جانے کا ڈر نہیں ہے
وارڈ نمبر چھ" کسی بھی عظیم ناول سے کم نہیں ہے

لیکن کیا کبھی گودو کا انتظار ختم ہو گا؟

شارٹ فلمز

فیوچر کو ڈاؤنلوڈنگ پہ لگا رکھا ہے
ماضی کی پروفائل ایڈٹ نہیں ہو سکتی
حال کا فولڈر ڈیلیٹ نہیں کیا جا سکتا

گودو کے انتظار میں بیٹھے، ولادیمیر اور ایسٹراگن
ڈان کہوٹے کو دیکھ کر ہنسنے لگ جاتے ہیں
بھاری بدن پہ ہلکے کپڑے: سچ ہے مزید بھاری ہو جاتے ہیں

جب بھی کوئی تعارف میں "میرا نام" کہتا ہے
بمطابق مارکسزم اس کے کیپٹلسٹ ہونے کا اندیشہ ہے

رائٹر بننے سے زیادہ اچھا شارٹ فلموں کا آئیڈیا ہے
ہم نے صرف چیخوف کی خاطر، روس کا ویزہ لگوا لیا ہے

این انٹروڈکشن ٹو پاکستانز پولیٹیکل کلچر

ہمارے دل ٹوٹنے کی خبر بینروں پہ چھپی
ہم نے کیا کھانا ہے : نوٹس بورڈ پہ لکھا گیا
ہماری بغاوت سوشل میڈیا کی محتاج تو نہ تھی
ہماری بیماریوں کے چرچے دیواروں پر ہوئے

دیواریں کون سے ہینڈز فری یوز کرتی ہیں ؟
پاگل پن ماپنے کا سائنسی پیمانہ کون سا ہے ؟
سرکاری دفاتر سے ای میل کا جواب کب آئے گا ؟

پاکستانی کی اسرائیل سے دوستی غیر آئینی تو نہیں ہے ؟

انٹرنیٹ کے ریٹ بڑھنے پر، ہڑتال کی کال دینے سے
کیا ہم زیادہ ڈیٹا استعمال نہیں کر ڈالیں گے؟

Did you enjoy reading this article?
Subscribe to our free weekly E-Magazine which includes best articles of the week published on Laaltain and comes out every Monday.
Junaid ud-Din

Junaid ud-Din

Junaid-Ud-Din has competed his BA hons. from GCU Lahore. He is a Pan Islamist Socialist and Freelance Journalist. He is mad about Russian classic literature, Anton Chekhov, Maxim Gorky, Ivan Tergenev, Fudor Dostoevsky and Leo Tolstoy are his inspirations to write. Orhan Pamuk,Mario Vargas Llosa and Naguib Mahfouz are among his favourites.


Related Articles

یاد ایک جھولنا ہے

عمران ازفر: تمام رات آسماں تھپکتا ہے
ہر ایک تارے کی کمر
دمِ سحر غلافِ شب لپیٹ لے
جو دن جا چکا ہے اور دوپہر کا وقت ہے

تم نہیں دیکھتے

ابرار احمد: آنکھیں دیکھتی رہتی ہیں
لیکن تم نہیں دیکھتے
پڑے رہتے ہو عقب کے اندھیروں میں، لمبی تان کر
اور نہیں جانتے
آنکھیں کیا کچھ دیکھ سکتی ہیں

دشمنی کی فارینزک رپورٹ

وجیہہ وارثی: ہم دونوں ایک ہی قبر میں دفن کر دیے گئے
ہم نے دشمنی ترک کرنے کااعلان کیا
دشمنی جو صدیوں سے جاری ہے