بلوچستان :قوم پرست رہنمانصاب کا حصہ؛ "نوجوان نسل کو دھوکہ نہیں دے سکتے"وزیرِ اعلیٰ

بلوچستان :قوم پرست رہنمانصاب کا حصہ؛ "نوجوان نسل کو دھوکہ نہیں دے سکتے"وزیرِ اعلیٰ
مانیٹرنگ
campus-talksبلوچستان حکومت نے تعلیمی نصاب میں نواب اکبر بگٹی سمیت پانچ دیگر قوم پرست رہنماوں سے متعلق اسباق نصاب میں شامل کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ بلوچ اور پشتون قوم پرست رہنماوں کی شمولیت کا اعلان گزشتہ ہفتے وزیراعلیٰ بلوچستان ڈاکٹر عبدالمالک نے ایک انٹرویو کے دوران کیا۔ وزیرِ اعلیٰ کے مطابق بلوچ نوجوانوں کو میر غوث بخش بزنجو، عبدالصمد خان اچکزئی، نواب اکبر خان بگٹی، میر یوسف عزیز مگسی کی سیاسی جدوجہد سے متعلق آگاہی دی جائے گی۔تاہم انہوں نے یہ واضح نہیں کیا کہ وفاق سے قوم پرستوں کے تنازعے کو نصاب میں شامل کیا جائے گا یا نہیں۔

ڈاکٹر عبدالمالک نے صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ نوجوان نسل کو دھوکہ نہیں دے سکتے۔ انہوں نے اس بات کی یقین دہانی کرائی کے قوم پرست رہنماوں کے ساتھ تحریکِ آزادی کے رہنماوں سے متعلق مواد بھی نصاب میں شامل رہے گا۔ دوسری طرف وائس چانسلر کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے وزیرِ مملکت برائے تعلیم بلیغ الرحمٰن نے نظام ِ تعلیم خصوصاً نصاب کو قومی ہم آہنگی کے لئے مرکز کے ماتحت رکھنے پر زور دیا۔

ماہرین تعلیم کے مطابق بلوچستان ، سندھ ، سرائیکی خطے اور خیبر پختونخواہ کے قوم پرستوں کا نصاب میں شامل نہ ہونا چھوٹے صوبوں اور قومیتوں کے حامل طلبہ کی محرومی کا باعث ہے۔ پاکستان کے نظام تعلیم کی دوقومی نظریے کی بنیاد پر تشکیل کی وجہ سے نصاب میں ریاستی بیانیے سے اختلاف کرنے والے نقطہ نظر کے حامل سیاسی رہنماوں سے متعلق متن شامل نہیں کیا جاتا۔ ماہرین نے اکبر بگٹی اور دیگر قوم پرست رہنماوں سے متعلق مواد کی شمولیت کو تاریخ کی درست تعبیر کی طرف پہلا قدم قرار دیا۔

طلبہ ذرائع کے مطابق اس اقدام سے بلوچ محرومیوں کا ازالہ تو نہ ہو سکے گا مگر پاکستان میں قوم پرست نظریات کو غداری کے مترادف سمجھنے کی روایت ضرور ختم ہو سکتی ہے۔ یاد رہے کہ اٹھارہویں ترمیم کے بعد اعلیٰ تعلیم سمیت محکمہ تعلیم کی بیشتر ذمہ داریاں صوبائی حکومتوں کو منتقل ہو چکی ہیں۔ اس سے قبل خیبر پختونخواہ کی گزشتہ حکومت نے قوم پرست رہنماوں سے متعلق نصاب کا حصہ بنایا گیا تھا جسے موجودہ کے-پی-کے حکومت خارج کرنے کا فیصلہ کر چکی ہے۔



Related Articles

Education in Balochistan: Misplaced Priorities Amid Great Challenges

The education sector in Balochistan is in a sorry state whilethe government is only relying on rhetorical promises about improving the situation.Independent studies carried out about the scale of the problem paint an abysmal picture.

یو ای ٹی ٹیکسلا چھ نئے مضامین متعارف کرائے گی

یونیورسٹی آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی ٹیکسلااگلے تعلیمی سال کے دوران چھ نئے تعلیمی کورسز متعارف کرائے گی۔

طالبا ت اور شدت پسندی، آمنے سامنے

"جمعیت کے غنڈوں کی جانب سے ایک خاتون کا حجاب کهینچنا اور تین طالبات کو طمانچے اور ڈنڈے مارنا اس بات کی دلیل ہے کہ یہ لوگ بھی طالبان یا داعش سے کم شدت پسند نہیں۔