بلوچستان :قوم پرست رہنمانصاب کا حصہ؛ "نوجوان نسل کو دھوکہ نہیں دے سکتے"وزیرِ اعلیٰ

بلوچستان :قوم پرست رہنمانصاب کا حصہ؛ "نوجوان نسل کو دھوکہ نہیں دے سکتے"وزیرِ اعلیٰ
مانیٹرنگ
campus-talksبلوچستان حکومت نے تعلیمی نصاب میں نواب اکبر بگٹی سمیت پانچ دیگر قوم پرست رہنماوں سے متعلق اسباق نصاب میں شامل کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ بلوچ اور پشتون قوم پرست رہنماوں کی شمولیت کا اعلان گزشتہ ہفتے وزیراعلیٰ بلوچستان ڈاکٹر عبدالمالک نے ایک انٹرویو کے دوران کیا۔ وزیرِ اعلیٰ کے مطابق بلوچ نوجوانوں کو میر غوث بخش بزنجو، عبدالصمد خان اچکزئی، نواب اکبر خان بگٹی، میر یوسف عزیز مگسی کی سیاسی جدوجہد سے متعلق آگاہی دی جائے گی۔تاہم انہوں نے یہ واضح نہیں کیا کہ وفاق سے قوم پرستوں کے تنازعے کو نصاب میں شامل کیا جائے گا یا نہیں۔

ڈاکٹر عبدالمالک نے صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ نوجوان نسل کو دھوکہ نہیں دے سکتے۔ انہوں نے اس بات کی یقین دہانی کرائی کے قوم پرست رہنماوں کے ساتھ تحریکِ آزادی کے رہنماوں سے متعلق مواد بھی نصاب میں شامل رہے گا۔ دوسری طرف وائس چانسلر کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے وزیرِ مملکت برائے تعلیم بلیغ الرحمٰن نے نظام ِ تعلیم خصوصاً نصاب کو قومی ہم آہنگی کے لئے مرکز کے ماتحت رکھنے پر زور دیا۔

ماہرین تعلیم کے مطابق بلوچستان ، سندھ ، سرائیکی خطے اور خیبر پختونخواہ کے قوم پرستوں کا نصاب میں شامل نہ ہونا چھوٹے صوبوں اور قومیتوں کے حامل طلبہ کی محرومی کا باعث ہے۔ پاکستان کے نظام تعلیم کی دوقومی نظریے کی بنیاد پر تشکیل کی وجہ سے نصاب میں ریاستی بیانیے سے اختلاف کرنے والے نقطہ نظر کے حامل سیاسی رہنماوں سے متعلق متن شامل نہیں کیا جاتا۔ ماہرین نے اکبر بگٹی اور دیگر قوم پرست رہنماوں سے متعلق مواد کی شمولیت کو تاریخ کی درست تعبیر کی طرف پہلا قدم قرار دیا۔

طلبہ ذرائع کے مطابق اس اقدام سے بلوچ محرومیوں کا ازالہ تو نہ ہو سکے گا مگر پاکستان میں قوم پرست نظریات کو غداری کے مترادف سمجھنے کی روایت ضرور ختم ہو سکتی ہے۔ یاد رہے کہ اٹھارہویں ترمیم کے بعد اعلیٰ تعلیم سمیت محکمہ تعلیم کی بیشتر ذمہ داریاں صوبائی حکومتوں کو منتقل ہو چکی ہیں۔ اس سے قبل خیبر پختونخواہ کی گزشتہ حکومت نے قوم پرست رہنماوں سے متعلق نصاب کا حصہ بنایا گیا تھا جسے موجودہ کے-پی-کے حکومت خارج کرنے کا فیصلہ کر چکی ہے۔



Related Articles

فاٹا طلبہ کو مفت تعلیم فراہم کرنے کی یادداشت پر دستخط

فضائیہ ایجوکیشن کالج برائے خواتین اور محکمہ سماجی بہبود فاٹا کے درمیان ایک یادداشت پر دستخط کیے گئے ہیں جس کے تحت پاکستان کے زیر انتظام قبائلی علاقوں کے طلبہ کو مفت تعلیم فراہم کرنے کا اعادہ کیا گیا ہے۔

سابق برطانوی وزیر اعظم پاکستانی تعلیمی اداروں کے تحفظ میں مدد فراہم کریں گے

رواں ماہ سابق برطانوی وزیراعظم اور اقوم متحدہ کے ایلچی گورڈن براون اور پاکستانی وزیراعظم نواز شریف کے درمیان ہونے والے ایک معاہدے کے تحت سکولوں کے گرد حفاظتی انتطامات اور پیس زون قائم کیے جائیں گے۔

Eid Day for the Relatives of Baloch Missing Persons

Though the abduct-kill-dump policy by the state was launched during General Pervez Musharraf's military regime, it is still continuing unabated during the democratic regimes.