بہت یاد آتے ہیں

بہت یاد آتے ہیں

بہت یاد آتے ہی
چھوٹے ہو جانے والے کپڑے ،
فراموش کردہ تعلق
اور پرانی چوٹوں کے نشان -
----اولین قرب کی سرشاری،
سرد راتوں میں ٹھٹھرتے ہوے ,ریتلے میدان ...
پہلے پہل کی چاندنی میں ----
ڈھولک کی سنگت میں گاۓ ہوے کچھ گیت
اور نیم تاریک رہداریوں میں جگمگاتے لمس۔۔۔۔۔
.دوستوں کی ڈینگیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فراغت اور قہقہوں سے لدی کرسیاں۔۔۔۔
کھیل کے میدان۔۔۔۔۔
تنور پر پانی کا چھڑکاؤ۔۔۔۔۔
گندم کی خوشبو اور مہربان آنکھیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بہت یاد آتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دسویں کے تعزیے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مٹی اور عرق گلاب سے مہکے سیاہ لباس۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مستقبل کے دھندلے خاکے۔۔۔۔۔۔۔
.رخصت کی ماتمی شام۔۔۔۔۔۔۔۔
کہیں کہیں جلتے اداس لیمپ،
سر پٹختی ہوا میں ہلتے ہوئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اور رات کی بھاری خامشی میں دور ہوتی ہوئی ٹاپوں کی آواز۔۔۔۔۔۔۔۔
بہت یاد آتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بڑھے ہوئے بال،
منکوں کی مالا،
سر منڈل کی تان۔۔۔۔
پرانی کتابیں۔۔۔۔۔
وقت بے وقت کیے ہوے غلط فیصلے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پہلے سفر کی صعوبت۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دریا کے پل پر پھنسی ٹریفک اور ریل کی سیٹی۔۔۔۔۔۔۔۔۔
.وادی کا سینہ چیرتی ہوئی۔۔۔۔۔۔۔۔
کچھ مکان اور دروازے۔۔۔۔۔
- اور جب یہ دروازے بند ہوئے
آہستہ آہستہ اترتے ہوے اضمحلال کی دھند میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بہت یاد آتے ہیں۔۔۔۔
.دور کے آسمان ...اور پرندے۔۔۔
ایک ان دیکھی دنیا۔۔۔۔۔
اور اس پر بنا ہوا
عشق پیچاں کی بیلوں میں لپٹا ہوا
۔۔۔۔۔۔چھوٹی سرخ اینٹوں والا گھر۔۔۔۔۔۔
آتش دان کے پاس کیتلی سے اٹھتی بھاپ ۔۔۔۔۔
چمپی مخروطی انگلیاں۔۔۔۔۔
مضراب کو چھیڑتی ہوئیں۔۔۔۔
ایک روشن جسم آنکھیں ملتا ہوا -----
یادوں اور خوابوں کے یہ چھوٹے چھوٹے دیے ---
جلتے اور بجھتے رہتے ہیں---
بجھتے اور جلتے رہتے ہیں ---
اس روشنیوں بھرے شہر کی سرد مہر ، تاریک رات میں !!!
Image: Joshua Flint

Did you enjoy reading this article?
Subscribe to our free weekly E-Magazine which includes best articles of the week published on Laaltain and comes out every Monday.
Abrar Ahmed

Abrar Ahmed

Abrar Ahmad has been writing poetry since 1980. He has published two books of poetry till now, one of poems, 'Akhri Din Sey Pehlay' (1997), and other of ghazals, 'Ghaflat Kay Brabar' (2007). His poetry frequently takes up themes of existential angst, meaninglessness of life, disillusionment and displacement.


Related Articles

موت مجھے بلاتی ہے

ابرار احمد: میں ایک خواب سے دوسرے خواب میں
اس شام سے گزر کر جانا چاہتا ہوں
تم کہاں ہو
موت مجھے بلاتی ہے

دھرتی نوحوں میں ڈوبی ہے

علی زریون: میں تو کوڑھیوں میں بیٹھا ہوں
دو کوڑی کے گھٹیا کوڑھی !
یہ دھرتی کے اجڑے پن پر خاک لکھیں گے؟؟
مجمع گیر بھلا کیسے ادراک لکھیں گے؟؟

صلاح الدین درویش:خواب نامے کا دیباچہ

حفیظ تبسم: اے بزرگِ انسان و کائنات
ہمارے خواب حدود سے آگے نکل چکے ہیں
انھیں مرنے سے بچالے