تبسم ضیاء کی نظمیں

تبسم ضیاء کی نظمیں

تبسم ضیاء کی یہ نظمیں اہم ہیں، ایک تو اس لیے کہ ان نظموں میں جنسیت اور جنسیت زدگی کو سینسر کرنے کی کوئی شعوری کوشش موجود نہیں، اور دوسرا اس لیے کہ یہ نظمیں جنیسیت کو موضوع بناتے ہوئے کہیں بھی لغو نہیں ہوئیں۔ لیکن ان نظموں کو محض ان کے بے باک موضوعات یا اظہار کی بناء پر اہم قرار نہیں دیا جا سکتا، بلکہ کسی بھی قسم کی اختیاری ابہام پسندی سے عاری اس سادہ طریق اظہار کی ستائش بھی ضروری ہے جو جدید نظم گو کے ہاں مفقود ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نطفے کا شور

(۱)
ہر سپرم ایک سوچ کا حامل ہے
نہ کوئی کسی کا باپ ہے
نہ کوئی کسی کا بیٹا
ہواؤں میں اچھالے گئے نطفوں کے سواکوئی نطفہ ماتحت نہیں ہوتا

(۲)
گٹر کے ڈھکنوں تلے بہائے گئے نطفے
سوکھی جگہ پر بیٹھ کراپنے زخم کھرونچ رہے ہیں
وہ ہمیں گھورتے ہیں
جیسے اپنی شناخت کے منتظر ہوں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

خدا کی شہنائی

کائنات کے سُر
شہنائی کے سُر ہیں
دوغلے سُر
شادمانی کی آڑ میں غمگین سُر
جب پھیپھڑوں سے نکل کے منہ میں آتے ہیں
تو استا د بسم اللہ خان کے گال دنیا بن جاتے ہیں
ہر ہر آدمی اس کی شہنائی سے نکلتے سُر کے مشابہ ہے
مَکرے سُر۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نطفے کی موت

پنڈلیوں سے بال صاف کرتی عورتیں
اور وضو خانوں میں کلائیاں دھونے والیاں
اپنے نطفہ دانوں کو روتی ہیں
برسوں برگد کی داڑھی کوسنوارتی ہیں

اشک باری سے جڑیں نہیں سینچتیں،
پھل نہیں لگتے
ذکور اپنی ماداؤں سے آبیانہ وصول کرتے ہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ایمان تھر تھر کانپتاہے

نظر کی اک بوند کو ترسنے والوں کا ایمان کیوں کر قائم رہ سکتا ہے؟
لیکن ہے
پپوٹوں کے کھنڈرات میں بینائی کے نوادرات دریافت نہیں ہوتے

عقیدہ موت کا موجب ہے
صحرائی عورتوں کے مرجھائے ہوئے رحموں میں اُلو بولتے ہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

رحم خوفزدہ ہے

ماداؤں نے بچے جننا چھوڑ دیے ہیں
وہ عضوِ تناسل کو کیکٹس سمجھتی ہیں
رحم سوکھ چکے ہیں
اور کوکھیں کیڑے پالتی ہیں

مرد اپنی بیویوں کے پاس جانے سے کتراتے ہیں
وہ بچے کی پیدائش سے خوفزدہ ہیں
جو پیٹ سے تھیںانہوں نے بچے گرا دیے
گرے ہوئے بچے اپنی مائوں کو دعا دیتے ہیں
پِیٹھیں اندھیرے میںایک دوسرے کو گھورتی ہیں
بافتوں میں پڑے بے کار نطفے کسی کیمیا گر کے منتظر نہیں
’’اللہ اکبر۔۔ ، اللہ اکبر۔۔۔‘‘ کی صدا ئیں بلند ہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دو بے ربط مصرعے

میں ایک نظم لکھنا چاہتا ہوں
لیکن مصرعوں کوجانے کیا ہو جاتا ہے
بحر ۔۔۔درست نہیں ہوتی
کبھی ارکان پورے نہیں ہوتے اور وزن نہیں بنتا
نظم مکمل نہیں ہو پاتی
اور اگر
کبھی یوں لگے کہ مکمل ہونے کو ہے تو
آخری مصرعے پر قلم ٹوٹ جاتا ہے

وہ سودا بیچنے والی نہیں
نہ میں تماشبین ۔۔۔

Did you enjoy reading this article?
Subscribe to our free weekly E-Magazine which includes best articles of the week published on Laaltain and comes out every Monday.

Related Articles

نغمۂ جنوں

رانا غضنفر: میرے حرفِ جُنوں کے سندیسے
بزمِ آفاق سے اُبھرتے ہیں
اور میں نغمہِ جنوں لے کر
پھر کسی جُستجو میں نکلا ہوں

الفاظ سے آگے

جلیل عالی: میں ان پہاڑوں، چٹانوں، ہواؤں،
ندی نالوں،چشموں، گھٹائوں،
پرندوں، چرندوں،
گھنے جنگلوں ہی کا حصہ ہوں
قرنوں کا قصہ ہوں

یہ دلّی تھی، یہ لاہور تھا

ستیہ پال آنند:کاش کہ میں نا بینا ہوتا
پھوٹ گئی ہوتیں یہ آنکھیں، جو یہ منظر دیکھ رہی ہیں!
یہ دلّی ہے، یہ لاہور ہے
یہ دلّی تھی، یہ لاہور تھا!