جب پانسہ پلٹے گا

جب پانسہ پلٹے گا
سورج راجا!
شہر کے لوبھی ساگر جل کے غصّے کو للکار رہے ہیں،
وہ دن آخر کب آئے گا،
جس دن ساگر شہر کے ہر اک اونچے بُرج پہ چڑھ دوڑے گا۔۔۔
شہر کے سارے لوبھی پُورش مر جائیں گے،
جل اترے گا۔۔۔
اڑتے باگھ کی جہاں جہاں تک دید پڑے گی،
برجوں کے ملبوں کے اوپر ہری ہری سی کائی ہو گی۔۔
مینہ برسے گا،
گھاس اُگے گی اور دھرتی کی گودبھرائی ہو گی۔۔۔
ساگر کا غصّہ اترے گا،
اور پھر اک دن
سبزہ اپنا بدلہ لے گا۔۔۔

Asad Fatemi

Asad Fatemi

Asad Fatemi is a freelance writer and a poet. He is a former editor of Urdu section of Laaltain. He lives in his hometown in district Jhang.


Related Articles

یہ بغاوت بھری نظم سنتی کہاں ہے

کئی بار سوچا
قلم کو معطّل کروں
اور احساس معزول کر دوں
سُکوں سے جیوں
جس طرح سے سبھی جی رہے ہیں

میرا سایہ

عذرا عباس: لیکن جب کبھی
کوئی مجھے کہیں دیکھ لیتا ہے
میرے سینے میں
چھرا گھونپ دیتا ہے

یین یانگ

ایک ہی
نقطۂ امکاں میں بسے
حرف سے
دو نام
ابھرتے ہیں