جہاد بالبرینجلینا؛ آئی ایس آئی نے معروف اداکار جوڑے کی طلاق کیوں کروائی؟

جہاد بالبرینجلینا؛ آئی ایس آئی نے معروف اداکار جوڑے کی طلاق کیوں کروائی؟
یہ خبر خبرستان ٹائمز پر انگریزی میں پڑھنے کے لیے کلک کیجیے۔

معروف ہندوستانی صحافی ارناب گوسوامی نے اپنے ٹی وی پروگرام نیوز آور میں انکشاف کیا ہے کہ آئی ایس آئی نے اُڑی حملے سے توجہ ہٹانے کے لیے انجلینا جولی اور بریڈ پٹ کے مابین طلاق کرائی ہے۔ ارناب گوسوامی نے اپنے پروگرام میں اس طلاق کے پیچھے کارفرما سازش سے پردہ اٹھایا اور ثبوت بھی مہیا کیے۔
اس جائز مگر مکروہ جہاد بالطلاق کو پاکستان کے لیے آخری راستہ قرار دیا جا رہا ہے۔ مبصرین کے مطابق پاکستان کے پاس اس کے سوا کوئی چارہ نہیں تھا کہ وہ مشہور اداکار جوڑے کی طلاق کرائے۔ پاکستانی عسکری ماہرین کے مطابق پاکستان 1947 سے ہندوستانی کشمیر میں جہاد کو پروان چڑھا رہا ہے لیکن جہاد میں اضافے کے ساتھ ساتھ دنیا کی کشمیر پر پاکستانی موقف میں کمی واقع ہوئی ہے۔ کشمیر جہاد میں عالمی دلشسپی پیدا کرنے کے لیے پاکستانی افواج کو جہاد بالبرینجلینا کا آغاز کرنا پڑا۔

یہ جہادی انتفادہ کامیاب رہا ہے اور دنیا نے برینجلینا کی طلاق پر گفتگو کے دوران پاکستانی موقف کی تائید کی ہے۔ حتیٰ کہ کشمیر پر غمزدہ پاکستانیوں کو بھی برینجلینا کی طلاق کا دکھ زیادہ ہے جو پاکستانی کارروائی کی کامیابی کا ثبوت ہے۔ خبرستان ٹائمز نے ذمہ دار صحافت کا بیڑا اٹھاتے ہوئے یہ جاننے کی کوشش کی ہے کہ کیا پاکستانی فوج بطور ادارہ اس طلاق کے پیچھے تھی یا فوج کا محض ایک دھڑا اس کارروائی میں شریک تھا۔ سابق آئی ایس آئی سربراہ جنرل (ر) شجاع پاشا نے خبرستان ٹائمز کو بتایا "برینجلینا طلاق کے پیچھے موجود لوگ ہمارے ہی تھے مگر یہ کارروائی ہماری نہیں۔"

تاہم انہوں نے اس بات کی تائید کی کہ'ہمارے لوگوں میں سابق فوجی افسران بھی شامل تھے۔ اور سابق فوجیوں اور جہادیوں کا یہ گٹھ جوڑ ہمیں عالمی طاقتوں کے سامنے ان حملوں میں ملوث ہونے کی تردید کرنے کا موقع فراہم کرتا ہے۔" کشمیر پر اس روایتی موقف کے تحت ہی پاکستان نے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے حالیہ اجلاس میں برینجلینا طلاق میں ملوث ہونے سے انکار کیا ہے۔ خبرستان ٹائمز اس موقع پر سابق پاکستانی فوجیوں (اور ان کے دوستوں) کو خراج تحسین پیش کرتا ہے جو ریٹائرمنٹ کے بعد بھی اپنے سرپرستوں کے احکامات پر عملدرآمد کر رہے ہیں۔

یہ ایک فرضی تحریر ہے۔ اسے محض تفنن طبع کی خاطر شائع کیا گیا ہے، کسی بھی فرد، ادارے یا طبقے کی توہین، دل آزاری یا اس سے متعلق غلط فہمیاں پھیلانا مقصود نہیں۔
Did you enjoy reading this article?
Subscribe to our free weekly E-Magazine which includes best articles of the week published on Laaltain and comes out every Monday.

Related Articles

'فوج کے ہاتھوں پٹنے والے قومی سلامتی کے لیے خطرہ ہیں' آئی ایس پی آر کا انکشاف

خبرستان ٹائمز: میجر جنرل عاصم باجوہ نے پارلیمان سے موٹروے پولیس پر پابندی عائد کرنے کے لیے قانون سازی کرنےاور تمام فوجی ڈرائیوروں، سابق فوجیوں، فوجی افسران کی بیگمات، ہمسایوں اور خانساماوں کے لیے چالان فری ڈرائیونگ لائسنس جاری کرنے کا مطالبہ کیا۔

آن لائن پاک بھارت جوہری جنگ؛ کی بورڈ، لیپ ٹاپ اور ایل سی ڈی کی فروخت میں اضافہ

خبرستان ٹائمز: فیس بک پر پندرہ ارب پاکستانی فالورز کے حامل زید حامد کے مطابق پاکستان کہوٹہ میں نئی فورتھ جنریشن جوہری سِمیں تیار کرنے کے قریب پہنچ چکا ہے جو پوکھران میں ہندوستان کی جانب سے کیے گئے تجربات کا جواب دینے کے لیے تیار کی جا رہی ہیں۔

پاکستان میں بھارتی مداخلت، 'وار' فلم کی ڈی وی ڈی بطور ثبوت اقوام متحدہ میں جمع کرائی جائے گی۔ سرتاج عزیز

خبرستان ٹائمز: نامہ نگار خبرستان ٹائمز کی تحقیق میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ پاکستان کی جانب سے پیش کی جانے والی فائل میں موجود افراد رمل، لکشمی، میجر مجتبیٰ رضوی، اعجاز خان اور احتشام دراصل آئی ایس پی آر کی معاونت سے تیار ہونے والی بلاک بسٹر پاکستانی فلم 'وار' کے کردار ہیں۔