حسرت میں ملفوف ایام

حسرت میں ملفوف ایام

تارکول سڑک پہ تھکاوٹ
دھوئیں کے مرغولوں میں سے گزرتی
یونیفارم میں ملبوس چہروں پہ
مسکراہٹ اچھالتی
لفظوں اور شاعری کی گرہیں کھولتی
جامعہ کے مین گیٹ سے گزرتی ہے

بوجھ تلے دبا ناتواں وجود
کھڑے کھڑے جمع شدہ توانائی کھو کر
جب سیڑھیاں چڑھتا ھے
تقسیم علم کا معاوضہ اسے تھام لیتا ھے
ترازو میں تھکاوٹ کا پلڑا
بھاری ھو کر زمین چھو لیتا ھے
کتابوں کےحرف تتلیوں کا روپ دھار کر
تھکن بانٹتے ہیں۔

وہ کبھی پوری نیند نہیں سو پاتی
فاصلوں کو سمیٹتے پاوں
چلنے سے انکار بھی کر دیں
تو بھی
وہ چلتی رہتی ہے
صبح سے رات تک کا سفر نظمیں چھین لیتا ہے

وہ ایک جملہ لکھتی ہے
بچوں کی فی ووچر نظم پہ آ گرتے ہیں
وہ دوسرا لکھتی ہے
ونٹر یونیفارم نوٹیفیکیشن سامنے آتا ہے
الماری میں گرم کپڑے نہ پاکر
نظم کا سر کچلتی
وہ روتے روتے
کیلینڈر پہ دن گنتی ہے

ابھی تنخواہ ملنے میں
پورے پچیس دن باقی ہیں
نظم ابارشن کے مرحلے سے گزرتی ہے
وہ
خالی بٹوے کو دیکھتی
سڑکوں پہ بھاگتی
تھکاوٹ کو غصہ سے
روٹھی نظم کو حسرت سے دیکھتی ہے

Image: Irfan Gul

Did you enjoy reading this article?
Subscribe to our free weekly E-Magazine which includes best articles of the week published on Laaltain and comes out every Monday.

Related Articles

میں کوئی کام ڈھنگ سے نہیں کر سکتا

بیٹھے بٹھائے
بادلوں اور ہواؤں کے ساتھ چل پڑتا ہوں
اچھی بھلی دھوپ کے ہوتے ہوئے
بارشوں میں بھیگنے لگتا ہوں

نظم مجھے ہر جگہ ڈھونڈ لیتی ہے

نصیر احمد ناصر: میں اُسے نہیں لکھتا
وہ مجھے لکھتی رہتی ہے
اَن کہے، اَن سنے لفظوں میں
اور پڑھ لیتی ہے مجھے
دنیا کی کسی بھی زبان میں

میں پھر اٹھوں گی

میں تاریخ کے شرمناک گھروندوں سے نکلتی ہوں
اُس ماضی میں سے سفر شروع کرتی ہوں
جس کی جڑیں دُکھ، درد اور تکلیف میں دبی ہوئی ہیں
میں اُچھلتا، ٹھاٹھیں مارتا ہُوا، وسیع و عریض ایک تاریک سمندر ہوں
جو اپنی لہروں میں بہتا جا رہا ہے