سپاہی تنویر حُسین کی ڈائری - 11 دسمبر 1971- "یومِ بختیار صاحب"۔

سپاہی تنویر حُسین کی ڈائری - 11 دسمبر 1971-
زکی نقوی

tanvir-hussain-ki-diary-bangal-featured

آج چونکہ کیمپ کی کمان صوبیدار بختیار صاحب کے سپرد تھی لہٰذہ آدھی نفری تو سارا دن" چِندی اور پُھلترُو "لئےرائفلیں صاف کرتی رہی۔باقی نفری صوبیدار صاحب کے اخلاقیات، ملٹری، سیاست اور جنسیات کے موضوع پر دیئے گئے درس سے لطف اندوز ہوتی رہی۔اُنہوں نے کُچھ کام کی باتیں بھی بتائیں۔وہ کہہ رہے تھے کہ رُوس اس جنگ میں بھارت کی مدد کررہا ہے جبکہ پاکستان کو بھی چین نے فوجی امداد کا عندیہ دیا ہے۔اُنہوں نے امریکی مدد کا بھی بتایا۔وہ کہہ رہے کہ اُنہوں نے تو سن پینسٹھ والی جنگ کے بعد ہی ان حالات کی پیشن گوئی کردی تھی۔کیا پتہ وہ حسبِ عادت 'لنگر گپ 'چھوڑ رہے تھے۔

صوبیدار صاحب نے ایک لطیفہ بھی سُنایا کہ بارڈر پہ پاکستانی اور بھارتی وائرلیس کی فریکنسی مل گئی،بھارتی کرنیل نے پاکستانی آپریٹر سے کہا "اوئے سپاہی، اٹن شن ہو کے بات کرو مُجھ سے" پاکستانی آپریٹر نے ترنت جواب دیا "سر آپکی ماں کی۔۔۔اوور اینڈ آوٹ" ہم لوگ اس پربہت ہنسے۔اس کے بعد اُستاد چمڑے نے گانا سُنایا اور ساتھ بِہاری تندورچی نے ڈھولکی کی جگہ جَیری کین بجائی۔۔۔

شام کو کیپٹن دُرانی صاحب بخیرئیت واپس آگئے لیکن ازحد غمگین تھے۔اُنہیں فیلڈ ہسپتال سے یہ خبر ملی تھی کہ اُن کےخالہ ذاد بھائی جو کہ بیناپول میں میڈیکل افسر تھے، اپنی بیوی اور بچوں سمیت مُکتی باہنی کے ہاتھوں بے دردی سے قتل کر دیئے گئے ہیں۔ وہ بتا رہے تھے کہ کئی شہروں میں مُکتی باہنی والے بِہاریوں کا قتل عام کررہے ہیں ۔ اُن سےسُنا کہ شہروں میں عام بنگالیوں پر بھی بہت سختی ہے اور ہندووں کی تو خاص سختی آئی ہے۔شام ہوئی تو تمام کیمپ پہ اُداسی اور خاموشی چھائی ہوئی تھی۔

پُنوں سارا دن اِدھر اُدھر رہا اور رات کو میرے پاس آیا اور بولا "ماموں، اپنی جیکٹ دےدو، صبح صبح اُستاد سردار کے ساتھ گھنشام گھاٹ والی پکٹ پہ ناشتہ پہنچانے جانا ہے" میں نے اپنی جیکٹ اُٹھا کر دے دی۔آج کچھ راشن کی سپلائی بھی ملی تھی۔


(چندی:نرم کپڑا جو بندوق /جوتے صاف کرنے کیلئے استعمال کرتے ہیں۔پُھلترُو: انگریزی لفظ Pull-Through کا پنجابی/فوجی بگاڑ، سلاخ جس میں چندی اُڑس کر بندوق می نالی صاف کی جاتی ہے۔پکٹ:مورچہ)

ڈائری کے گزشتہ دن



Related Articles

Naina

Hammad Rasheed: Naina never wanted to sell herself just for the sake of few rupees but it was to ensure her meals and bare necessities.

کالے تجھے کتا کھالے

ممتاز حسین: اوئے کالے تجھ میں تو سب رنگ ہیں تیرے سب رنگ نکل جائیں تو میں بچتاہوں۔ چٹا صرف بے رنگ۔۔۔چٹا سائیں۔ تو جمع ہے میں تفریق ہوں۔ آؤ ہم آنکھوں کے ڈھیلوں کو بدل لیتے ہیں تمہاری آنکھین کالا دیکھیں اور میں سفید۔ ‘‘

‘Reconciliation’ By Benazir Bhutto (Excerpt)

    The stakes could not have been higher. Pakistan under military dictatorship had become the epicenter of an international