سپاہی تنویر حُسین کی ڈائری - 14 دسمبر 1971- بونگلہ دیش سے پہلے۔۔۔

سپاہی تنویر حُسین کی ڈائری - 14 دسمبر 1971- بونگلہ دیش سے پہلے۔۔۔
میں صبح وردی پہن کر باہر نکلا تو دیکھا کہ اسمبلی گراونڈ میں چھے بنگالی درختوں سے بندھے کھڑے تھے اور کوت نائیک صاحب ان سے برآمد ہونے والے اسلحے کا معائنہ کررہے تھے۔ سنتریوں نے ہر طرف سے ان بنگالیوں پر رائفلیں تان رکھی تھیں۔ان میں دو کم سن لڑکے بھی تھے جو سکول کی وردی میں تھے۔میں نے انہیں شدید نفرت سے دیکھا کیونکہ اسی لمحے میری آنکھوں کے سامنے پُنّوں کا چہرہ گھوم گیا جس کو دونوں مُلکوں کی باہمی دُشمنی کا کچھ پتہ تھا نہ وہ مجیب، یحیی، اندرا یا پچھلے انتخابات کے بارے میں کچھ جانتا تھا۔میرا دل غم اور غصے کے ملے جلے تاثرات سے بھر گیا اور میں بھاگ کر دُرّانی صاحب کے دفتر میں آگیا۔ہم دونوں دیر تک چُپ بیٹھے رہے۔کپتان صاحب نے وائرلیس پر برگیڈ کےکسی افسر سے چند انگریزی مکالمے کئے، میں نے ان کی میز،کُرسی ،وائرلیس اور دیگر سامان کی جھاڑ پونچھ کردی۔پھر کافی دیر بعد دُرّانی صاحب اُٹھ کر باہر چلے گئے۔پھر ایک دم رائفل جی ۔تھری کا فائر چلنے کی فلک شگاف آواز آئی، شور اُٹھا تو میں نے باہر جھانک کر دیکھا۔کیپٹن دُرّانی صاحب نے ایک باغی کو گولی مار دی تھی۔میں اب اس قتل و غارت سے عاجز آچکا تھا، میں نے کھڑکی بند کرکے آنکھیں بھینچ لیں۔ پھر یکے بعددیگرے برسٹ چلنے کی آوازیں آئیں اور بنگالی زبان کی تمام چیخ پکار بند ہوگئی۔ کچھ دیر کے بعد کیپٹن دُرّانی دوڑتے ہوئے اندر آئے،رائفل جی ۔تھری ایک طرف رکھی،اندر سے دروازے کی چٹخنی چڑھائی اور کُرسی پر بیٹھ کر سسکیاں لے کر رونے لگے۔وہ اپنی آواز دبا رہے تھے۔میں یہ منظر دیکھ کر مات و مبہوت رہ گیا۔ "تنویر، یہ سب بکواس ہے،یار انہیں ہم سے الگ ہو جانا چاہیئے، لیکن میں اس زمین کے بونگلادیش بننے سے پہلے مرجانا چاہتا ہوں۔میں مشرقی پاکستان میں مرنا چاہتا ہوں" وہ عجیب باتیں کیے جارہے تھے،سسکیاں لیے جارہے تھے اور میں انہیں دلاسہ دیے جارہا تھا۔

ڈائری کے گزشتہ دن


Zaki Naqvi

Zaki Naqvi

Zaki Naqvi has graduated in Urdu Literature and International Relations. He writes stories, essays and humor in his own unique style. Currently he is a lecturer in Urdu.


Related Articles

نروان

آج کی پہلی مشت زنی کے بعد میں تھک کر بیٹھ گیا۔ مجھے اب مچھروں، اٹھائی گیروں اور رات کی پرواہ نہیں رہی لیکن دن کا خوف ابھی باقی ہے۔

راجندر سنگھ بیدی کی یاد میں

محمد حمید شاہد: بیدی نے انسانی نفسیات کو سمجھنے اور انسانی بطون میں اتر کراس کے گنجھل کھولے ہیں، انتہائی ضبط اور پورے خلوص کے ساتھ ،اور یہ کوئی معمولی اور کم اہم واقعہ نہیں ہے

مہارشی بالمیک

جو کچھ تم نے کہا ہے، اور جس طرح کہا ہے، اس کو شلوک(شعر)کہتے ہیں۔تم دنیا کے سب سے پہلے شاعر ہو۔علم اور فن کی دیوی سرسوتی تم پر مہربان ہے۔لہٰذا اسی چھند(بحر)میں تم رام چندر جی کے حالات رامائن کے نام سے لکھنا شروع کردو۔