عمر قید

عمر قید

مجھے اپنے ہی جسم میں
قید کر دیا گیا ہے
پچھلے کئی سالوں میں
اس جسم کے اندر
مَیں بہت سی عمر قیدیں
گزار چکا ہوں
لیکن میری رہائی نہیں ہو پا رہی ہے

میرا برتاؤ بھی سب سے بہت اچھا ہے
ملنسار بھی مشہور ہوں
جیلر نے کئی مرتبہ
اچھے رویے پر
مجھے شاباشی بھی دی ہے

میرا کام میں دل بھی بہت لگتا ہے
کبھی کبھی تو
مقررہ وقت گذرنے کے بعد بھی
کام میں جُتا رہتا ہوں
وقت پہ سو بھی جاتا ہوں
صبح سویرے آنکھ بھی کھل جاتی ہے

لیکن جب سے قید خانے میں
نیا جیلر آیا ہے
صفائی کا انتظام بہتر ہو گیا ہے
غذا بھی اچھی مل رہی ہے
کشادہ کھڑکی سے
سورج بھی دیکھ پاتا ہوں
ہوا بھی تازہ چل رہی ہے
دوا بھی وقت پہ مل رہی ہے

قید خانہ جب سے
کشادہ ہو گیا ہے
میری اس قید میں
کئی اور سالوں کا
اضافہ ہو گیا ہے ۔۔۔

Did you enjoy reading this article?
Subscribe to our free weekly E-Magazine which includes best articles of the week published on Laaltain and comes out every Monday.
Rizwan Ali

Rizwan Ali

ڈاکٹر رضوان علی کراچی کی ادبی سرگرمیوں میں کئی برس تک مصروف رہے۔ اب گزشتہ ۲۲ سالوں سے امریکہ کی ریاست ورجینیا میں مقیم ہیں اور وہاں کی تین یونیورسٹیوں میں نفسیات کے پروفیسر ہیں۔ ادب کے ساتھ ساتھ تھیٹر اور موسیقی سے بھی خاص لگاؤ ہے۔ تقریباً ڈیڑھ سال سے ایک معتبر ادبی فورم "لٹرری فورم آف نارتھ امریکہ" کے نام سے چلا رہے ہیں۔ نظم اور غزل دونوں اصنافِ سخن کو اظہار کا ذریعہ گردانتے ہیں۔


Related Articles

کور چشم ولدیت

صفیہ حیات: میں عورت ہوں
مگر تم سے ولدیت چھین لوں گی

They Make You like Their Own Selves

Beyond these mountains
in the dark valley
with hoards of stashed gold and gems
and a universal trend to devour all
they live with a locust instinct

بھائی، سب اونگھ رہا ہے

یہ آسمان نہیں ہے
یہ آنکھیں ہیں
یہ مجھے اور تمھیں دیکھ رہی ہیں
ہمیں دیکھ رہی ہیں
ہم کون ہیں؟
ہم گھبراہٹ ہیں