فلسطینیوں کے نام ایک محبت نامہ

فلسطینیوں کے نام ایک محبت نامہ
ہمیں نعرے لگانے ہیں
ہمیں جوشیلے لفظوں کے سبھی ٹائر جلانے ہیں
تدبر کی، تفکر کی یہاں ساری ٹریفک جام کرنی ہے
ہمیں ہڑتال بھی اک عام کرنی ہے
تم اپنے بچے جلواؤ گے، نعرے ہم لگائیں گے،
تم اپنی مائیں ، بہنیں، بیٹیاں اک بار مرواؤ گے
ہم امت کے اس غم میں خود اپنا شہر لوٹیں گے، لہو میں ڈوب جائیں گے۔
کہ ہم جیسا نہیں ہمدرد کوئی
اے محمد مصطفٰیﷺ یاں تیری امت کا
اگر مارے غنیم اک امتی تیرا
تو ہم اس امتی پر سینکڑوں گھر آپ اپنے وار سکتے ہیں۔
خود اپنے شہر میں لاشوں بھری سب بوریاں کب یاد ہیں ہم کو۔
بس اک تصویر ہم کو چاہیے مولٰی
کہیں خوں میں نہائے ایک لاشے کی
ہمارے پاس دیں کی نذر کو یہ آبگینہ ہے
جھلکتی ہے تری امت کی جس میں آبرو اب تک
Zafar Khan

Zafar Khan

Zafar Khan is a teacher and poet. He lives in Pennsylvania, United States.


Related Articles

Highlights from 2nd Islamabad Literary Festival

Second Islamabad literature Festival had been organized by Oxford University Press from 25-27 April, 2014. More than 120 writers, poets,

اعراف

ابھی کتب خانے میں آیا ہوں۔ بارش تھم نہیں رہی ،جو دو گھڑی رکی تو پھر ٹپکنے لگی .. نیند آئی ہوئی ہے .. ہاآ! ایک لمبی نیند کے لیے کتنی بھاگ دوڑ کرنا پڑتی ہے ۔۔۔۔

کسی دن چلیں گے کراچی

نصیر احمد ناصر: کسی دن چلیں گے
کراچی
سمندر میں آنکھیں بہا کر
اُسے دیکھنے کی تمنا کریں گے