لیاقت پور؛ زمین پر قبضے کے لیے ہندوقبرستان کی بے حرمتی

لیاقت پور؛ زمین پر قبضے کے لیے ہندوقبرستان کی بے حرمتی
نامہ نگار: ظہیر عباس

ضلع رحیم یار خان کی تحصیل لیاقت پور کے گاوں چک نمبر 32 میں واقع بھیل برادری کے پچاس سال پرانے قبرستان کی زمین پر قبضے کے لیے قبروں کی بے حرمتی کا واقعہ پیش آیا ہے۔ تفصیلات کے مطابق ایک مقامی زمیندار اللہ دینہ ارائیں نے قبرستان کی ایک کنال زمین پر قبضے کے لیے قبروں کو کھود کر مردوں کی باقیات اور کفن نذرآتش کر دیے۔ بھیل برادری کے لیے یہ قبرستان ایک مقامی زمیندار کی جانب سے دی گئی ایک ایکڑ زمین پر قائم کیا گیا تھا جو مقامی آبادی کی جانب سے کیے گئے پے در پے قبضے کی وجہ سے گھٹ کر ایک کنال رہ گئی تھی جسے ہتھیانے کے لیے اللہ دتہ عرف دینو نے قبروں کو کھود کر برابر کر دیا۔ یہ واقعہ ہفتہ سولہ جولائی کو پیش آیا۔

قبریں کھود کر مردوں کی باقیات نذرِآتش کی گئیں

قبریں کھود کر مردوں کی باقیات نذرِآتش کی گئیں

بھیل برادری کی جانب سے اس مذموم کارروائی کے خلاف مقامی سماجی تنظیم "وسیب دوست" کے کارکن اظہر بلوچ سے رابطہ کیا گیا جن کی کوششوں سے پولیس اور انتظامیہ نے بروقت کارروائی کا آغاز کیا اور دینہ ارائیں نے قبضے میں لی گئی زمین واپس کر دی۔ اظہر بلوچ نے لالٹین سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ مقامی بھیل غریب اور پسماندہ ہیں، اس لیے قانونی کارروائی کی بجائے ان سے رابطہ کیا۔ ان کا کہنا تھا کہ انہوں نے اپنی تنظیم وسیب سنگت کی جانب سے انتظامیہ سے رابطہ کیا۔ ڈی سی او رحیم یار خان اسسٹنٹ کمشنرظہور حسین بھٹہ کی جانب سے اثرورسوخ استعمال کر کے زمین کا تسٖیہ کرایا گیا ہے۔انتظامیہ کی جانب سے کارروائی کے ڈر سے دینہ نے ایک کنال زمین اپنی جانب سے بھی بھیل برادری کو دینے کا اعلان کیا۔ مقامی انتظامیہ کا کہنا ہے کہ قبرستان کی بقیہ زمین بھی واگزار کرائی جائے گی۔ اظہر بلوچ کے مطابق مقامی بھیل برادری کا معاشی انحصار انہی بااثر زمینداروں پر ہے اس لیے وہ کسی بھی قانونی کارروائی سے گریزاں ہیں۔

قبروں کی بے حرمتی زمین پر قبضے کے لیے کی گئی

قبروں کی بے حرمتی زمین پر قبضے کے لیے کی گئی

مقامی بھیل برادری کے افراد احتجاج کرتے ہوئے

مقامی بھیل برادری کے افراد احتجاج کرتے ہوئے

پاکستان میں مذہبی اقلیتیں آئینی تحفظ کے باوجود دوسرے درجے کے شہریوں کی طرح زندگی گزارنے پر مجبور ہیں۔

Photography: Azhar Baloch

Did you enjoy reading this article?
Subscribe to our free weekly E-Magazine which includes best articles of the week published on Laaltain and comes out every Monday.

Related Articles

عورتوں کے ووٹ اور جماعت اسلامی کی شکست

دیر پاکستان کا ایک خوبصورت کوہستانی خطہ ہے جو چترال اور پشاور کے درمیان سوات کے قریب واقع ہے۔

انقلاب کے موسم میں

عمران خان یا طاہر القادری حکومت گرانے میں سنجیدہ ہوں یا نہ ہوں نواز لیگ کی حکومت کی گھر جانے سے متعلق سنجیدگی پر کسی کو چنداں شک نہیں ہونا چاہیے کیوں کہ منتخب ہونے کے بعد سے اب تک نواز شریف حکومت نے کوئی ایسا موقع ہاتھ جانے ہی نہیں دیا۔

زخم ابھی تازہ ہے

دہشت گردی کی حالیہ لہر 2001 میں امریکہ کی افغان مداخلت اور پاکستانی افواج کی طالبان کے حوالے سے اپنائی گئی دوغلی حکمت عملی کا نتیجہ ہے۔