محبت کے بغیر ایک نظم

محبت کے بغیر ایک نظم
محبت کے بغیر ایک نظم
بے وصل موسموں میں
بادلوں پر حاشیہ نہیں لگایا جا سکتا
اور بارشوں میں
کاغذ کی نظمیں نہیں لکھی جا سکتیں

بدن کا لباس پہنے بغیر
روح کو چھپانا
اور محبت کے بدون
دھوپ اور چھاؤں کو ایک ساتھ اوڑھنا ممکن نہیں

نقادوں کے قلم رو میں
پیدا ہوتے ہی
نظم کے سینے میں
اصطلاحات کا خنجر گھونپ دیا جاتا ہے
مصنوعی علامتوں اور استعاروں کے نام پر
ریت کے ایک ذرے کو صحرائے کبیر
درخت کو گوتم،
کھمبے کو خدا
اور گھونسلے کو پستان بنا کر
معنی کا سر قلم کر دیا جاتا ہے

سچ ہے
آسمان سے سفارتی تعلقات استوار کیے بِن
شاعری ہو سکتی ہے
نہ زمین پر رینگنے کے حقوق مِلتے ہیں!
Naseer Ahmed Nasir

Naseer Ahmed Nasir

Naseer Ahmed Nasir is one the most eminent, distinct, cultured and thought provoking Urdu poets from Pakistan. He is considered as a trend setter poet of modern Urdu poems among his contemporaries. His poetry has been translated into various languages and has several poetry collections to his credit. A lot of his work is yet to be published.


Related Articles

سُنو، بلیک ہول جیسے آدمی!

نصیر احمد ناصر: سُنو، بلیک ہول جیسے آدمی!
مجھے تم دُور لگتے ہو

بین کرتے رہو

سرسراتی لہو میں اُکستی صدا کو سماعت میسر نہیں آ سکی

رنگ و روغن ابھی گریہ کرتی ہوئی آنکھ میں

نم زدہ ہے

سوراخوں سے رِستی سیاہی

حسین عابد: میں دیکھتا ہوں
وہ میرا خون
سیاہی میں بدلتے ہیں