نمبر

نمبر
نمبر
ہر طرف اونچے گریڈوں کا شور ہے
انسان کھوگئے ہیں نمبروں کی دوڑ میں
مر بھی جائیں تو گویا صرف ایک نمبر کی موت ہے
ہزار دو ہزار جو مرتے تو کوئی قابل ذکر بات تھی
بھول گئے وہ پرانا سبق
ایک بھی قتل ناحق
اصل میں تمام انسانیت کا قتل ہے
بس یاد رہ گیا ہے
کروس ملٹی پلیکیشن کا شارٹ کٹ
چاہے وہ چارج شیٹ ہو یا
امتحان کی مارکس شیٹ
یا پھر
بے نام اجتماعی قبروں میں پڑیں لاپتا پیاروں کی باقیات

Did you enjoy reading this article?
Subscribe to our free weekly E-Magazine which includes best articles of the week published on Laaltain and comes out every Monday.
Salma Jilani

Salma Jilani

Salma Jilani is originally from Karachi, Pakistan, she worked as a lecturer for eight years in Govt Commerce College Karachi. In 2001 she moved to New Zealand with her family and completed M.Business from Auckland University. She has been teaching in different international tertiary institutes on and off basis. Writing short stories in Urdu is her passion which have been published in renowned quarterly and monthly Urdu literary magazine such as Funoon, Shayer, Adab e Latif, Salis , Sangat and Penslips magazine and in children’s magazines as she writes stories for children as well. She also translates several poems of contemporary poets from all over the world into Urdu and vice versa, since she considers translations work as a bridge among different cultures which bring them closer and remove stereotyping.


Related Articles

ڈی این اے کی خود سے لڑائی

ثروت زہرا: علیشا سب سے پہلے
جننے والی کوکھ نے تم کو جدائی دی
عقائد نے ترے سوتک سے پاتک تک کے بارے میں
صفائی دی

ہرکولیس اور پاٹے خاں کی سرکس

حسین عابد: کسی سڈول خیال کو
محبوبہ نہیں ملتی
حاسد بھول بھلیاں اسے
جواں ہونے سے پہلے بوڑھا کر دیتی ہیں

لاشوں کا احتجاج

صفیہ حیات: جنم لینے سے انکار سمے
بچے نے ڈائری لکھی
جس میں
بم دھماکوں سے
بہرے اور اندھے ھونے والے بچوں کی آپ بیتیاں تھیں