کبھی ہم بھی "چائے والے" تھے

کبھی ہم بھی
احمد شمیمؔ صاحب کی نظم "کبھی ہم بھی خوبصورت تھے" کی پیروڈی "کبھی ہم بھی چائے والے تھے" فیاض محمود نے کی ہے۔ یہ پیروڈی اسلام آباد کے اس چائے والے کی شہرت کو سامنے رکھتے ہوئے تخلیق کی گئی ہے جس کی تصویر سوشل میڈیا پر ٹرینڈ کر رہی ہے۔ سب سے پہلے jiah_ali@ نے اسلام آباد کے اس چائے والے نوجوان کی تصویر پوسٹ کی تھی، جو سوشل میڈیا پر وائرل ہو گئی۔


کبھی ہم بھی "چائے والے" تھے
کبھی ہم بھی چائے والے تھے
چائے کا پوا پکڑے
ہاتھ ساکن تھے !
روزانہ بہت سے کپوں میں
چائے بناتے تھے
پھر ٹرے میں رکھ کر
بنچوں پر بیٹھنے والے گاہکوں
کو تھماتے تھے
جو ہم سے دودھ پتی
مانگتے تھے، لیکن مایوس ہوتے تھے
نئے دن کا سویرا، جب دیہاڑی لگانے کو
ہمیں نیند سے جگاتا تھا
تو ہم کہتے تھے
صبح دیر تلک سونا کتنا خوبصورت ہے
ہمیں وہ نیلا کرتا دو کہ
ہم کو لڑکیوں کے
کیمروں کے دیس جانا ہے
ہمیں لڑکیوں کی نظریں، کیمروں کی
سیلفیاں آواز دیتی ہیں
نئے دن کی مشقت ، چائے کے ڈھابے
پر بیٹھے ہوئے
سیلفی کے لیے بلاتی ہے
ہمیں وہ نیلا کرتا دو !
ہمیں وہ نیلا کرتا دو !
ہمیں وہ نیلا کرتا دو !

Did you enjoy reading this article?
Subscribe to our free weekly E-Magazine which includes best articles of the week published on Laaltain and comes out every Monday.

Related Articles

Dar, Dream and Dollar

Lately the news came to fore that Pakistan has earned a huge sum of 1.5 million dollars from brother Saudi Arab as a part of good will gesture for the strong friendship between two nations.

آشیانہ میرا خواب نمانہ

بچپن سے آج تک میں نے ہر پریشانی کو کسی نہ کسی طرح حل کیا ہے لیکن ایک سیدھی سی بات میرے لیے پریشانی کا باعث بنی ہوئی ہے۔

خربوزہ خربوزے کو دیکھ کر تعلیم حاصل کرتا ہے

ایک انتہائی مشہور کہاوت ہے کہ خربوزہ خربوزے کو دیکھ کر رنگ پکڑتا ہے۔