کسی دن مِلیں گے

کسی دن مِلیں گے
کسی دن مِلیں گے
کسی دن مِلیں گے
عروضی زمانوں سے باہر
شبِ استعارہ منائیں گے
تمثیل حُسنِ ازل کی
کسی صد مثالی جبیں میں، حسیں میں تلاشیں گے
لفظوں کے اثقال سے
معنویت کو آزاد کر دیں گے
ابہام آلودہ دنیا سے نکلیں گے
ویراں ستاروں پہ رقصِ بلاغت کریں گے
کوئی ایسا پیکر تراشیں گے
جو کائناتی تصور سے بھی ماورا ہو
کسی خواب آمیز مجہول دن کو علامت بنا کر
محبت کی نثری حلاوت چکھیں گے،
حقیقت لکھیں گے

 

ابھی تک تو بس ایک مِیٹر ہے، رُوں رُوں ہے
جس میں زمانوں کی رَو بہہ رہی ہے
یہی کہہ رہی ہے
فقط مَیں ہی مَیں ہوں کوئی تُو نہیں ہے
سنو شش جہاتو! کوئی ساتویں سُو نہیں ہے
نہ منزل نہ رستہ نہ کوئی سفر ہے
ہر اک سمت "لا" کا گزر ہے
ہر اک شے کا اپنا تناظر ہے، اپنی نظر ہے
کوئی کتنا اصلی ہے، نقلی ہے کس کو خبر ہے، مگر ہے
ہر اک شیڈ کی اپنی چَھب ہے، دِکھاوٹ ہے
جیسے دھنک ایک آبی شجر ہے
جڑیں جس کی بادل کے اندر ہیں
بادل سمندر کا بیٹا ہے
جس کا پہاڑوں پہ گھر ہے
زمینے! ترے کینوس پر
زمانوں کی پینٹنگ بناتے بناتے کبھی تھک گئے تو
ہم اُس گھر میں جائیں گے مہمان بن کر
یگوں تک رہیں گے
نہائیں گے رنگوں میں، غسلِ صباحت کریں گے

 

ابھی دورِ تخلیق جاری ہے پیہم
ابھی ایک سرمستی طاری ہے ہر دَم
ابھی مجھ کو فرصت نہیں ہے
ابھی نظم مجھ کو لکھے جا رہی ہے
فعولن فعولن فعولن فعولن
مِلیں گے کسی دن مِلیں گے
فراغت ہوئی تو
خدا سے بھی، تجھ سے بھی
دونوں جہانوں سے باہر مِلیں گے
کسی دن عروضی زمانوں سے باہر مِلیں گے !!

Image: Daehyun Kim

Naseer Ahmed Nasir

Naseer Ahmed Nasir

Naseer Ahmed Nasir is one the most eminent, distinct, cultured and thought provoking Urdu poets from Pakistan. He is considered as a trend setter poet of modern Urdu poems among his contemporaries. His poetry has been translated into various languages and has several poetry collections to his credit. A lot of his work is yet to be published.


Related Articles

گلیڈی ایٹرز

ناصرہ زبیری: تو ہوئے کیا
مری تاریخ پہ پھیلے
وہ محبت کے الوہی قصے
دردِ انساں کے زمینی دعوے
وہ ترے عشق میں ڈوبے نعرے

قبریں

نصیر احمد ناصر:
ہر جانب
ساکت و صامت
چلتی پھرتی
خالی اور لبالب
ہر جانب قبریں ہیں

اجنبی، کس خواب کی دنیا سے آئے ہو؟

نصیر احمد ناصر: اجنبیت ۔۔۔۔۔ قربتوں کے لمس میں سرشار
گم گشتہ زمانے ڈھونڈتی ہے
زندگی دکھ درد بھی قرنوں پرانے ڈھونڈتی ہے