کوڑے کے ڈھیر پہ پڑا سچ

کوڑے کے ڈھیر پہ پڑا سچ

کل اس نے شراب کے دو پیگ لئے
پھر نفاست سے سچ بولا
" بھوک چمک جاتی ہے"

کبھی دھلے دھلائے چہروں کو دیکھ کر
کبھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بات ادھوری رہی
کوڑا چنتے
بدبودار نسوانی وجود کی تاک میں بھٹکتی نظر
دائروں اور قوسوں میں رستہ ڈھونڈنے لگی

زچگی کے دن ماں کے گھر گزارتی بیوی
بستر کے ساتھی کو
ساتھ لانا بھول گئی

عورت کی بھول
رات کے کسی پہر جاگی
بھاگتی ہوئی
کوڑے کی بدبو اٹھا لائی
بستر کی چادر پہ ہوس کے داغ پکے نکلے
کبھی نہ دھلے

کوڑے پہ پڑی ہوس
اکثر
آدھی رات کو مرد کے پہلو میں سو جاتی ہے
اور سگریٹ کا دھواں اڑاتا آدمی
سو نہیں پاتا
بدبو
نیلی شرٹ کے بٹنوں میں گھسی رہتی ہے
مٹی سے اٹے بالوں پہ رکھے بوسے
اس کے منہ پہ تھپڑ رسید کرتے ہیں

عورت نومولود کو دودھ پلاتے
اس کو
شراب کے پیگ پیتے دیکھ کر
ہراساں ہو جاتی ہے
سو نہیں پاتی
جب وہ سچ بولنے لگتا ہے

Did you enjoy reading this article?
Subscribe to our free weekly E-Magazine which includes best articles of the week published on Laaltain and comes out every Monday.

Related Articles

قبروں پر بارش

افتخار بخاری: بارش گرتی ہے
مٹیالی قبروں پر بارش گرتی ہے
حد نظر تک جل تھل
سیلا سیلا خواب مسلسل

اے میری، سردیوں کی دھوپ سی، شیریں محبت!

کومل راجہ: اے مجھ پر
سخت جاڑے کے دنوں میں مسرتیں لے کر
اترنے والی جامنی محبت!

میں بالکل ٹھیک ہوں

تنویر انجم: تم پوچھتے ہو کیسی ہو؟
میں کہتی ہوں بالکل ٹھیک
میں پوچھتی ہوں تم کیسے ہو؟
تم ایک نئے قصے کا آغاز کرتے ہو
تفصیلات کے ساتھ