گھوڑا اور آدمی

گھوڑا اور آدمی
گھوڑے اور آدمی کے ساتھ کو آج مدتیں بیت گئی تھیں اور اب وہ ایک دوسرے کی شکل دیکھنے کے بھی روادار نہیں تھے۔ چلتے چلتے گھوڑے نے سوچا ،"بس بہت ہو ا آج یہ سارا تماشہ ختم ! مجھے بات کرنا ہی ہو گی کہ میں اب اس کے اور ساتھ نہیں رہ سکتا۔"
ایک چھوٹی سی جھیل کے کنارے پڑاو ڈالا گیا اور آدمی نے گھوڑے کی زین کھول دی۔ آگ جلائی اور دونوں اپنا اپنا دکھڑا پھر سے سوچنے بیٹھ گئے۔ آدمی نے سوچا کہ میں نے اسے پالا پیارکیا ، کھانے کو دیا ، اس کی ہر ضرورت کا خیال رکھا اور یہ ناشکرا پھر بھی کبھی مجھ سے خوش نہیں ہوتا ۔ گھوڑے نے سوچا کہ یہ خود غرض شخص ساری دنیا میری پیٹھ پر بیٹھ کر گھوم آیا ، میرا کیا فائدہ تھا جو میں اس کا بار اٹھائے اٹھائے پھرا ہوں۔
"بس بات ختم"، اچانک آدمی بولا۔" آج کے بعد تم مجھ سے آزاد ہوئے اور میں تمہارے دانہ پانی کی فکر سے۔ یہ جنگل ختم ہوتے ہی ہم ایک دوسرے کو خداحافظ کہہ دیں گے اور پھر کبھی نہیں ملیں گے۔ " گھوڑا چپ چاپ مان گیا۔
دونوں نے آخری بار اکٹھے کھانہ کھایا ۔ آدمی جدائی کے بوجھ تلے دبا ہوا بمشکل اٹھا،گھوڑے پر زین کسی اور اس کی باگ پکڑ کر پیدل چل پڑا۔ دن آدھے سے زیادہ گزر چکا تھا۔ جب وہ دونوں خاصی دور یوں ہی رہے تو گھوڑے سے رہا نہ گیا اور اس نے آدمی سے پوچھا ، " سوار کیوں نہیں ہوتے؟"آدمی چپ چاپ چلتا رہا، گھوڑے نے پھر پوچھا ، آدمی کچھ نہ بولا۔ تیسری بار گھوڑے نے غصے سے پوچھا تو آدمی نے بمشکل جواب دیا،" مانگی ہوئی جدائی اتنی مشکل ہے تو اَن چاہی جدائی کیسی ہوتی ہو گی؟"
گھوڑے کو لگا کہ اس کی زین منوں وزنی ہو چکی ہے اور وہ اب کبھی نہیں چل پائے گا لیکن جنگل ان کے پیروں کے نیچے سے کھینج کر نکال لیا گیا۔ شام کے سائے گہرے ہوگئے تھے اور وہ جنگل کے اندھیرے اور اِسے آ لگنے والی برف کی سفیدی کی سرحد پر کھڑے تھے۔ جب خاموشی اور رات بڑھنے لگے تو آدمی بولا، " جنگل ختم ہو گیا ہے۔ " گھوڑے کو آدمی وہی لڑکا لگا جسے دیکھ کر اس نے فیصلہ کیا تھا کہ میری پیٹھ پر چڑھنے والا یہ پہلا اور آخری انسان ہوگا۔ اور آدمی نے اس دکھ ، سردی ، جنگل اور اندھیرے میں گھوڑے کے سیاہ سائے کو دیکھا اور سوچا کہ وہ اسے آخری بار دیکھ رہا ہے۔ آدمی کو وہ وُکے ہوئے آنسو جو اس نے گھوڑے کو پانے کی دھمکی کے طور پر اپنے باپ کو سمیٹ کر دکھائے تھے، پھسل کر اس کی ڈاڑھی تک آئے اور جم گئے۔
"جنگل ختم ہو گیا ہے" آدمی نے دہرایا مگر گھوڑا اپنی جگہ سے ہل نہ پایا اور آدمی بے سمت ہو کر وہیں بیٹھ گیا۔ صبح ہوئی تو جنگل نے ان دونوں کو جھیل کے کنارے ایک الاو کے پاس بیٹھے دیکھا۔ شام ہوئی تو جنگل آدمی اور گھوڑے کو وہیں ایک گھر بنانے میں مدد دے رہا تھا۔ اور پھر ان دونوں نے تمام عمر جھیل کے سنگم پر گزار دی ، جدائی کی سرحد کو پار کرنے کا حوصلہ کئے بغیر۔ ۔
Shehar Bano

Shehar Bano

Shehar Bano is a painter, writer and dress designer.


Related Articles

سفید دھاگہ

سفید چکن کے کرتے پاجامے میں ملبوس، ایک ہاتھ میں بچوں کی کاپیوں سے بھرا شاپنگ بیگ، دوسرے ہاتھ میں شولڈر بیگ اور آنکھوں پر سن گلاسز لگائے وہ رکشے سے اتری۔

تقدیر

میخائل شولوخوف: یہ بوڑھے لوگ جن کے سَر جنگ کے کٹھن سالوں نے سفید کر دئیے ہیں، صرف راتوں کو نیند میں ہی نہیں روتے بلکہ دن کی بیداریوں میں بھی روتے ہیں۔ بات یہ ہے کہ آدمی بر وقت مُنہ ایک طرف پھیر لینے کے قابل ہو۔ اور بڑی بات یہ ہے کہ ایک بچے کا دل نہ دُکھنے دیا جائے! اُسے وہ بے اختیار آنسُو نظر نہ آنے دیا جائے جو کہ ایک مرد کے رُخساروں کو بھی جلا دیتا ہے!!!

سون مچھلی

ایک شہر تھا جس میں تھوڑی سی دہلی، تھوڑی ممبئی، تھوڑا بنارس، تھوڑا کلکتہ، تھوڑا پٹنہ، وغیرہ ٹھیک ویسے ہی تھے جیسے دہلی میں تھوڑا پٹنہ، تھوڑا کلکتہ، تھوڑا بنارس وغیرہ ہیں۔