ہیلے کالج کا گرفتار طالب علم پوچھ گچھ کے بعد رہا

ہیلے کالج کا گرفتار طالب علم پوچھ گچھ کے بعد رہا
ہیلے کالج آف کامرس جامعہ پنجاب کے پشتون طالب علم عتیق آفریدی کو پوچھ گچھ کے بعد رہا کر دیا گیا ہے۔ عتیق آفریدی کو گزشتہ ہفتے کالعدم تحریک طالبان پاکستان سے روابط کے شبے میں گرفتار کیا گیا تھا۔

محکمہ انسداد دہشت گردی نے کارروائی کرتے ہوئے پیلے کالج پنجاب یونیورسٹی کے طالب علم عتیق آفریدی کو گرفتار کیا تھا۔ عتیق آفریدی پر کالعدم تحریک طالبان پاکستان سے روابط کا الزام تھا۔ محکمہ انسداد دہشت گردی کی جانب سے جاری کیے گئے ایک بیان کے مطابق عتیق آفریدی خیبر ایجنسی سے تعلق رکھتا ہے اور اسے پنجاب یونیورسٹی کی حدود سے جمعہ 11 مارچ کو چھاپہ مار کر گرفتار کیا گیا تھا۔

عتیق آفریدی کو جمعے کے روز مار پیٹ کے الزام کے تحت یونیورسٹی انتظامیہ کے سامنے پیش کیا گیا تھا جہاں اس نے مبینہ طور پر بیت اللہ محسود اور نیک محمد کو اپنا رہنما قرار دیا تھا اور ان کی موت کا بدلہ لینے کا عزم ظاہر کیا تھا۔ یونیورسٹی کے چیف سیکیورٹی آفیسر میجر ریٹائرڈ سلیم کے مطابق عتیق آفریدی کا تعلق پشتون ایجوکیشنل ڈویلپمنٹ موومنٹ سے ہے۔
Did you enjoy reading this article?
Subscribe to our free weekly E-Magazine which includes best articles of the week published on Laaltain and comes out every Monday.

Related Articles

غیر قانونی یونیورسٹیوں کے خلاف ایف آئی اے کے ذریعہ کاروائی کی جائے گی

ایچ ای سی ذرائع کے مطابق اس کاروائی کے دوران منظور شدہ یونیورسٹیوں کے غیر قانونی کیمپسز اور غیر منظور شدہ یونیورسٹیوں کے خلاف کاروائی کی جائے گی۔

پنجاب یونیورسٹی میں ہولی کے ذریعے پیار، محبت اور امن کا درس

"ہولی پیار، محبت اور امن کا درس دیتی ہے اور رنگ بکھیرنے کا مقصد یہ ہے کہ ہم لوگ روزانہ بغیر کسی تفریق کے خوشیاں بکھیریں کیونکہ ایک دوسرے کی خوشیوں میں شامل ہونا ہی زندگی ہے۔"

لاء کالج : جمعیت نے اساتذہ یرغمال بنا لئے، "اصل معاملہ ہاسٹلز اور کیمپس پر اجارہ داری کا ہے"طلبہ

جمعیت کے مسلح ارکان نے یونیورسٹی انتظامیہ کی رِٹ چیلنج کرتے ہوئے جمعہ کو لاءکالج پر دھاوا بول دیا اور دو اساتذہ نعیم اللہ اور عمران عالم کو فیکلٹی روم میں بند کر کے اپنی شناخت چھپانے کے لئے سی سی ٹی وی کیمروں کا رخ موڑ دیا۔