یو ای ٹی ٹیکسلا چھ نئے مضامین متعارف کرائے گی

یو ای ٹی ٹیکسلا چھ نئے مضامین متعارف کرائے گی
یونیورسٹی آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی ٹیکسلااگلے تعلیمی سال کے دوران چھ نئے تعلیمی کورسز متعارف کرائے گی۔ یونیورسٹی انتظامیہ ان کورسزکے انعقاد کے لئے نئی عمارت بھی تعمیرکرائے گی۔ وائس چانسلر یوای ٹی ٹیکسلا پروفیسرڈاکٹر محمد عباس کے مطابق اگلے تعلیمی سال کے دوران یونیورسٹی کے طلبہ کو مارکیٹ کی ضروریات کے مطابق تعلیم دینے کے لئے گریجویشن سے لے کر ڈاکٹریٹ کی سطح تک انرجی انجینئرنگ،میٹیریل انجینئرنگ، الیکٹرانک انجینئرنگ،اپلائیڈفزکس اور ٹاون پلاننگ کے مضامین متعارف کرائے جائیں گے۔
یونیورسٹی ذرائع کے مطابق نئے مضامین کی تدریس اور عمارت کی تعمیر پر 95کروڑخرچ کئے جائیں گے۔ طلبہ کی تعداد میں اضافہ کے پیشِ نظر نئے ہاسٹل بھی تعمیر کئے جائیں گے۔نئے مضامین کے باعث یونیورسٹی کے طلبہ کی تعداد دگنی ہونے کی امید ہے۔ "ہم آنے والے برسوں میں طلبہ کی تعداد 6500 تک لے جانا چاہتے ہیں، یونیورسٹی کے اقدامات سے پی ایچ ڈی سکالرز کی تعداد 225 سے بڑھ کر 660 ہو جائے گی" ڈاکٹر عباس نے ذرائع ابلاغ سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا۔تفصیلات کے مطابق یونیورسٹی معیار تعلیم کی بہتری کے لئے تجربہ گاہوں میں بہتر سامان کی فراہمی پر بھی روپیہ خرچ کرے گی۔
مختلف مضامین میں تحقیق کے لئے یونیورسٹی انتظامیہ مختلف کاروباری اداروں سے تعاون اور تحقیقی مرکز کے قیام کے لئے بھی مختلف منصوبوں پر کام کر رہی ہے۔ طلبہ ذرائع نے یونیورسٹی کے ان منصوبوں کو سراہتے ہوئے اسے پاکستان میں انجینئرنگ کی تعلیم کے لئے خوش آئند قرار دیا ہے۔
The Laaltain

The Laaltain

For Open and Progressive Pakistan


Related Articles

خیبر پختونخواہ میں تعلیمی نصاب کی "اسلامائزیشن" کا عمل جاری

مانیٹرنگ ڈیسک+نامہ نگار خصوصی خیبر پختونخواہ میں پاکستان تحریک انصاف اور جماعت اسلامی کے اتحاد سے بننے والی حکومت کی

مخلوط تعلیم پر ہنگامہ آرائی، اسلامی جمعیت طلبہ کے خلاف احتجاج

گورنمنٹ سائنس کالج وحدت روڈ لاہور میں مخلوط تعلیم پر ہنگامہ آرائی کرنے پر گورنمنٹ سائنس کالج وحدت روڈ کے طلبہ اور پیپلز سٹونڈنٹس فیڈریشن نے احتجاجی مظاہرے کا اہتمام کیا۔

وزیراعظم سکالرشپ سکیم میں شامل نہ کئے جانے پر فاٹا کے طلبہ کا احتجاج

پاکستان کے زیرانتظام قبائلی علاقوں کے طلبہ نےوزیر اعظم سکالر شپ سکیم میں باجوڑ ایجنسی سے تعلق رکھنے والے 160 طلبہ کو شامل نہ کرنے کے خلاف مظاہر ہ کیا۔