یہ رسم الخظ اگر میں جانتا تو---

یہ رسم الخظ اگر میں جانتا تو---

گلزار کی یہ نظم معروف ادبی جریدے 'تسطیر' میں شائع ہو چکی ہے، لالٹین قارئین کے لیے اسے مدیر تسطیر نصیر احمد ناصر کی اجازت سے شائع کیا جا رہا ہے۔

تسطیر میں شائع ہونے والی مزید تخلیقات پڑھنے کے لیے کلک کیجیے۔

شاعر: گلزار

یہ رسم الخط اگر میں جانتا تو،
وہ سب پڑھتا جو موسم لکھ کے جاتا ہے

مری دیوار کی سیلن میں شاید لکھ گیا تھا
دراڑیں پڑ رہی ہیں
بھرے رپتے ہو شاید اسی لیے وہ رستی رہتی ہیں
کبھی تو خشک بھی ہونے دو آنکھوں کو!
کبھی پتوں پہ پڑتی سلوٹیں پڑھتا ہوں اُٹھ کر
نہیں یہ عمر کی جھریاں نہیں ہیں
پریشانی ہے کوئی اس کی پیشانی پہ لکھا ہے
ہوائے گرم سے گزرے ہو تم بھی
لکیریں تجربوں کی آنکھوں کے نیچے نظر آنے لگی ہیں!
ذرا اوپر کے روشندان پر دیکھو تو، گرد آندھی کی
پوں بیٹھی ہے آ کر
ہوا کی پھونک سے اُڑتی نہیں اب
فلک دھندلا نظر آتا ہے ان میں
نظر کمزور ہونے لگ گئی ہے

چمکتی دھوپ میں دیوار کے کونے سے اک پتی نے جھانکا ہے
بہت سینچی ہیں تم نے درد سے مٹی کی دیواریں
اُپج کی کونپلیں اُگنے لگی ہیں!

Image: Duy Huynh

Did you enjoy reading this article?
Subscribe to our free weekly E-Magazine which includes best articles of the week published on Laaltain and comes out every Monday.

Related Articles

ونڈو شاپنگ

نصیر احمد ناصر: تیری "سٹاپ اینڈ شاپ" میں دنیا
میرے مطلب کی ایک بھی چیز نہیں
مجھ کو تو یہ بھی معلوم نہیں کیا لینے آتا ہوں
دنیا! تجھ کو دیکھ کے واپس آ جاتا ہوں

اندھیرے میں اُگی مشروم

نصیر احمد ناصر:
وہ عجب سا خواب تھا، اس خواب میں آنکھیں بہت تھیں
جو اندھیرے میں ڈراتی تھیں ہمہ دم
میرے ہونے، کچھ نہ ہونے
اور سونے کا تماشا دیکھتی تھیں

شہر

شہر، اگرچہ ایسا کوئی یقین نہیں رکھتا
سب کو خوش آمدید کہتا ہے، جیسے وہ اکیلا آیا ہے۔
ضرورت کی فطرت دکھ کی طرح
بلکل ہر ایک کے اپنے مُطابق ہوتی ہے