ممتاز حسین کی ایک نظم

ممتاز حسین کی ایک نظم
جب انسانیت کا گلاب
روح افزا بنا
ماتمی جلوسوں پر
سوگ کی پتیاں بکھیرے ہوئے
آنکھوں کی پلکوں سے
لٹکی زنجیریں سے
دوسروں کی پشت پر
جھانکتے ڈیلوں کو
چیرنے لگتی ہیں
گروہوں میں بٹے
مالک مکانوں کے چوکیدار کتے
اپنے ہی زخموں کو چاٹنے لگتے ہیں
دماغ کی گلیوں میں
چپ کا ماتم ہوتا ہے
دل کے تھرکتے لب
نفرت کے نشتر سے
سل جاتے ہیں
کانوں میں لفظوں کا پگھلا سیسہ
صبر کی صراحی کا
گلہ گھونٹ دیتا ہے
عقیدت کا آٹھواں برج
کندھوں پر اٹھائے تعزیے
کو بارگاہوں کی صفوں کے نیچے
شہادت کے کلموں میں
دفن کر دیتا ہے
دس دنوں کا بھوکا پیاسا ذولجناح
جسم میں پروئے تیروں کو
چاندی کے ورق لگے پیالے
سنہری خوں سے
لبا لب بھر لیتا ہے
کراہت کا بہتا دریا
گندھارا کے بھوکے بدھا کو
سیم اور تھور کے
نمک سے ہنوز کر دیتا یے
دریائے سندھ کی تہذیب
ٰعجاہب گھر میں رکھے ہوئے
نفاق کے پیالے میں
بخارات میں تحلیل ہو جاتی ہے

Image: Kadhim Haider

Mumtaz Hussain

Mumtaz Hussain

Mumtaz Hussain is an artist, film maker and a writer. He has also served as an art director for Calvin Klein, Ralph Lauren and Simon & Schuster. Mumtaz directed 13 episodes of an informative talk show for channel 9 "Ask a Lawyer." His Urdu book of short stories, GOOL AINAK K PECHAY, LAFZON MAIN TASVEERAIN is published. His script The Kind Executioner received finalist award at Hollywood Screenplay Contest Hollywood and first award at Jaipur International film festival. His paintings and films have been shown at numerous museums, universities, art galleries and international film Festivals.


Related Articles

اسٹریٹ تھیٹر

وجیہہ وارثی: کتیا کے سر پر پتھر مارنے والی کو
دادوتحسین کی نگاہ سے دیکھا جاتا ہے
اور پلے اپنی دمیں چھپائے پھرتے ہیں

کچرے کی حکومت

زاہد امروز: جب اس ہنگامے کا شور
ہماری نیند آلودہ کرتا ہے
ہم کروٹ کروٹ کڑھتے ہیں

لاہور کا چھوٹا منافق اور منٹو نام کا سٹہ

میں جانتا ہوں شہروں کی نیندیں اجڑنا عالمی المیہ ہے
مگر بھاڑ میں جاۓ لندن اور نیو یارک کی لال آنکھیں
وہاں کی اینٹوں کی نظموں کا غزلوں میں ڈھلنے کا غم
وہاں کے رہنے والوں کو ہو تو ہو
مجھے نہیں ہے