آدمی بیوپار ہے

آدمی بیوپار ہے

آدمی بیوپار ہے
آدمی کا دل بیوپار ہے

آدمی شاپنگ بیگ لیے بازار جاتا ہے
آدمی شاپنگ بیگ میں گھر واپس آجاتا ہے

خالی جیب آوارہ کتے کی طرح بھونکتی ہے

کتے کے جسم پر جیب نہیں
کتے کے سامنے پیالہ ہے

کتا صرف گالی دے سکتا ہے
آدمی نہیں بن سکتا!
جس آدمی کی جیب نہیں ہوتی
اس کے پاس پیالہ ہوتا ہے

آدمی ہو یا کتا
جو روٹی دیتا ہے
وہ مالک ہوتا ہے

جب پیالہ نہیں تھا
میں آزاد تھا
اب پیالہ بھرا ہوا ہے
بیوپار ہو رہا ہے
اب میں پالتو ہوں
Image: Banksy

Zahid Imroz

Zahid Imroz

Zahid Imroz is a poet, writer and physicist. He has published two books of poems. He teaches physics and also works on global peace and security.


Related Articles

اگرگولی کی رفتار سے تیز بھاگ سکتا

حفیظ تبسم: میں کچھ دن اور زندہ رہ سکتا تھا
اگر۔۔۔۔
میرے ہاتھ میں پھول نہ ہوتے

پاگل ہاتھ لگا قلم

سچائی بےحیائی ہے
مجھے جھوٹ میں رہنے دو

قبرستان کو پوسٹ کی گئی نیم پلیٹ

سدرہ سحر عمران:ہوا مجھے آواز دیتی رہی
مگر۔۔۔۔ میرے پاؤں نہیں جانتے تھے
کہ
ایک رستہ پچھلی گلی میں بھی نکلتا ہے