Posts From H. B. Balouch

Back to homepage
H. B. Balouch

H. B. Balouch

پورے نو مہینے کا اجالا؛ سات مختصر نظمیں

ایچ-بی-بلوچ: میں چھوٹی عمر کا
نو مولود ستارہ ہوں
میرا راستہ کیسا اور کتنا ہوگا؟

Read More

سیدھے لوگ آخری دن کی اندیشگی نہیں پالتے

ایچ بی بلوچ:مچلھیاں اور سیدھے لوگ
آخری دن کی اندیشگی نہیں پالتے
انہیں کسی بھی وقت
کنڈے سے لٹکایا جا سکتا ہے

Read More

ہر عورت پینسل نہیں ہوتی

ایچ-بی-بلوچ: مجھے پینسلوں کی خوشبو کیوں پسند ہے؟
شاید اس لیئے کہ
مجھے ان سے لکھنا یا پھر ان کو چھیلنا پسند ہو

Read More

مجھے ڈوبنا نہیں آتا

ایچ- بی- بلوچ: میں بولنا بھی نہیں جانتا
کیا تم نے کبھی خاموش کنویں دیکھے ہیں؟
جن میں سے
کائی اگ آتی ہے
جو شہر بھر کے گند اور گناہوں میں
چپکے سے شریک ہوجاتے ہیں

Read More

بھگتنا ہاتھوں کو پڑتا ہے

ایچ- بی- بلوچ: مجسمہ سازی ہو یا تاریخ سازی
بھگتنا ہاتھوں کو پڑتا ہے

Read More

ایک پتھر خواب کا المیہ

ایچ-بی- بلوچ: پانی کا قطرہ
لاکھ چاہے اسے گوندھے
اسے پتھر نہیں بنا سکت
Read More

ہم سورج سے زیادہ معصوم ہیں

ایچ-بی- بلوچ: بڑھاپا کسئ چیز کو
اچھا رہنے کے قابل نہیں چھوڑتا
اس لیئے
سورج، مذہب اور انا
جب ہماری ناک جلانے لگیں
تو ہمیں کھڑکی بند کر لینی چاہئے
Read More

زہر کا گھونسلا

ایچ بی بلوچ: یہ بات الگ ہے کہ
کانٹے اپنی ضد میں
خاموش ہونٹوں اور سانپوں کی طرح
Read More

صبح کا ستارہ

ایچ-بی-بلوچ: آسمان
ماں کے سینے جیسا وسیع و عریض نہیں ہو سکتا
اس لیے اک بچے کے
بڑے ہونے کی مسافتوں کو
سال بلکہ صدیاں بھی بیت سکتی ہیں
Read More

کارواں سے گزارش

مجھے لے چلو
جہاں
عورت جب دانے چکی میں پیستی ہے
تو آٹے کا رنگ خون میں نہیں مل پاتا
Read More