Posts From Uzma Toor

Back to homepage
Uzma Toor

Uzma Toor

سماعتوں کے اندھیرے (عظمیٰ طور)

میں ان سماعتوں سے بھی واقف ہوں کہ جو گفتار کی بیساکھیاں تھیں مگر ٹوٹ چکی ہیں اب کسی کو کسی کے سہارے کی ضرورت کہاں ہے میں اس سماعت کے مفلوج ہونے کی بھی گواہ ہوں جو گفتار کو

Read More

ہاتھ (عظمیٰ طور)

آدھ گھنٹے میں اس کی آنکھوں کے سامنے پھیلے اس کے ہاتھوں پہ بکھری الجھی لکیروں پر کتنے ہی ان دیکھے رستے ابھر کر آئے اور معدوم ہو گئے ۔ کتنے چہرے مسکراتے ،اسے رلاتے چھیڑتے لجاتے کئی روزنوں سے

Read More

نو سال (عظمیٰ طور)

وہ جب کتاب ہاتھ میں لیے "حسن کوزہ گر" پڑھتا تو اس کے لہجے میں اِک عجیب درد اتر آتا شروع کی سطریں پڑھتے ہوئے وہ اُسے مخاطب کئے اُسے پکارتا "جہاں زاد یہ میں حسن کوزہ گر ہوں" اُس

Read More

پختگی (عظمیٰ طور)

میں اس سے جب ملی تھی وہ اپنی عمر کی تین دہائیاں بڑے ہی رکھ رکھاؤ بڑے سبھاؤ سے گزار چکا تھا میں بھی __ بھلا دس برس پہلے میں عمر کے کس حِصے میں ہوں گی؟؟؟ شاید عمر کے

Read More

خواب میں اِک بازار لگا تھا (عظمیٰ طور)

آنکھ لگی تو خواب میں اک بازار لگا تھا طرح طرح کے اسٹال لگے تھے ایک ریڑھی پر کوئی مہنگی چیزیں سستے داموں بیچ رہا تھا محبت کی قیمت اتنی کم تھی سنتے ہی میں رو پڑی تھی احساس بیچنے

Read More

اِک نظم (عظمیٰ طور)

اِک نظم ابھی ابھی الماری کے اک کونے سے ملی ہے دبک کر بیٹھی پچھلے برس کی کھوئی یہ نظم کب سے میں ڈھونڈ رہی تھی اس نظم میں مَیں بھی تھی تم بھی تھے ہم دونوں کی باتیں تھیں

Read More