پاروتی کا نیل کنٹھ (ثروت زہرا)

پاروتی کا نیل کنٹھ (ثروت زہرا)

میں نے دھیرے دھیرے
خواب کی ایک ایک گانٹھ کھولی
اور اس ڈوری کو اپنی گردن پر لپیٹ لیا
میں نے آہستہ آہستہ
تمنا کی شاخ سبز
زندگی کے مرتبان میں ڈال کر
اس کی شاخوں کا لیپ تیار کیا
اور دل کے زخموں پر لگا لیا
میں نے چپکے چپکے
شوق کے رسیلے پھل سے
ایک سانس نچوڑی
اور اپنی پیاس کی کٹوری
۔۔۔۔۔۔ میں انڈیل دی
میں نے سورج کی کرنوں کی حرارت نچوڑی
اور اپنی آنکھوں کے زخمی پپوٹوں کے
درمیان صبح کی خواہش میں دبا لیا
میں نے تمہاری
زلف گرہ گیر سے ایک
نصف دائروی کمان دریافت کی
اور تمہارے دائرے سے باہر نکلنے کا
متحرک زاویہ نکال لیا
Image: Neha Kapil


Related Articles

خودفریبی کے سرد خانے میں

یہ راز نہیں حقیقت ہے
کہ تنکا اپنے باطن میں
آگ کے علاوہ نمی بھی رکھتا ہے

پتھر کی زنجیر

ناصرہ زبیری: کیسے چھیڑوں ہاتھوں سے میں
چیخوں کا یہ ساز
شاہی در پر کیا اپناؤں
فریادی انداز

بندوق کے نمازی

ان میں سے ہر ایک کے اندر ایک جرگہ ہے
جہاں کلہاڑی کے وار سے لکھا ہوا
"سزائے موت"