شیما کرمانی کے نام

شیما کرمانی کے نام

کبھی رقص گاہوں
میں آ کر تو دیکھو
یہ خوابیدہ اجسام
کی خانقاہیں
لہو رنگ معبد
کی نخچیریوں سے
کہیں معتبر ہیں
یہ رقاص جو
ریش پیروں سے باندھے
مسلسل ہیں رقصاں
سیہ رنگ ملاں
کی عیاریوں سے
کہیں معتبر ہیں
کہیں معتبر ہے
گلا پھاڑتے
واعظوں کی صدا سے
یہ گھنگھرو کی
چھم چھم
یہ پیروں کی
دھم دھم

Did you enjoy reading this article?
Subscribe to our free weekly E-Magazine which includes best articles of the week published on Laaltain and comes out every Monday.

Related Articles

The Gravedigger

"He should dig his own pit before the whole city changes into a giant graveyard."

من کی ملکہ

شہناز شورو: ملکہ کا ذِکر اب شہر بھرکا موضوع تھا۔۔۔ ہر شخص کے پاس اپنا ہی ترازو تھا۔۔۔ اور ملکہ کے گناہوں کا پلڑا۔۔۔ بلاشبہ ہر جا، بھاری تھا

سائیں کے نام

سائیں بلاول،
اک دن تو نے
موہنجو دڑو کی مری ہوئی تہذیب کے اوپر
زندہ لوگوں کے جھرمٹ میں