طبیب بھنبھنا گیا (ستیہ پال آنند)

طبیب بھنبھنا گیا (ستیہ پال آنند)

فَتَکلّمُواَ تُعرَفُوا
کلام کرو تا کہ پہچانے جاؤ۔۔۔۔۔۔ حٖضرت علی کرم اللہ وجہہ

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

طبیب بھنبھنا گیا

میں سب علاج کر کے تھک گیا ہوں، پر
یہ بچہ بولتا نہیں
زبان اس کی ٹھیک ٹھاک، تندرست ہے
کہیں بھی کوئی رخنہ، کوئی نقص ہو

یہ میں نہیں سمجھ سکا
بدن بھی تندرست ہے

مگر یہ نو نہال چار سال کا
اشاروں سے ہی بات کرنا جانتا ہے، کیا کروں ؟

اسے کسی سپیشلسٹ کے پاس لے کے جایئے

یہ میں تھا چار سال کا

مری زبان بند تھی
کلام مجھ سے جیسے چھن گیا تھا پہلے دن سے ہی
جو دو برس کا مجھ سے چھوٹا بھائی تھا

وہ خوب بولتا تھا، پر
نہ جانے کیسے میری جیبھ گُنگ تھی
میں صم بکم تھا، بے زبان، دم بخود
کہ۔جیسے چُپ کا روزہ رکھ کے جی چکا تھا

چار سال کی یہ عمرِ مختصر

عجیب معجزہ ہوا کہ ایک دن
میں اپنے گھر کی ڈیوڑھی میں صم بکم کھڑا ہوا
تماشہ دیکھتا تھا اک جلوس کا
عَلم اٹھائے جس میں لوگ ’’یا حسین‘‘ ’’یا حسین‘‘ کہتے
سینہ پیٹتے، لہو لہان جا رہے تھے
اور میں ۔۔۔۔۔۔جسے

زبان آوری کا کچھ پتہ نہ تھا
نہ جانے کیسے اس سکوت کے اندھیرے غار سے

نکل کے بول اٹھا۔۔۔
’’حسین! یا حسین! یا حسین‘‘

اور پھر مرا سکوت
نطق میں ، کلام میں ، سخن میں ڈھل گیا۔۔۔۔

میں صاف بولنے لگا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
(لکھنؤ میں سُنی ہوئی ایک سچی کہانی کی شعری داستان)

Did you enjoy reading this article?
Subscribe to our free weekly E-Magazine which includes best articles of the week published on Laaltain and comes out every Monday.

Related Articles

آسیب زدہ کیل سے ٹکی تصویر

وجیہہ وارثی: تصویر پر بنے ہونٹوں پر ہونٹ ثبت کیے
ہونٹ غائب ہو گئے

دھرتی نوحوں میں ڈوبی ہے

علی زریون: میں تو کوڑھیوں میں بیٹھا ہوں
دو کوڑی کے گھٹیا کوڑھی !
یہ دھرتی کے اجڑے پن پر خاک لکھیں گے؟؟
مجمع گیر بھلا کیسے ادراک لکھیں گے؟؟

رات کی بے بسی

صفیہ حیات: میری گلیوں سے جانے والے کو کوئی موڑ لائے
وہ میری گلیوں کی بھول بھلیوں میں کھو کر
اپنے گھر کا رستہ بھول جائے