طبیب بھنبھنا گیا (ستیہ پال آنند)

طبیب بھنبھنا گیا (ستیہ پال آنند)

فَتَکلّمُواَ تُعرَفُوا
کلام کرو تا کہ پہچانے جاؤ۔۔۔۔۔۔ حٖضرت علی کرم اللہ وجہہ

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

طبیب بھنبھنا گیا

میں سب علاج کر کے تھک گیا ہوں، پر
یہ بچہ بولتا نہیں
زبان اس کی ٹھیک ٹھاک، تندرست ہے
کہیں بھی کوئی رخنہ، کوئی نقص ہو

یہ میں نہیں سمجھ سکا
بدن بھی تندرست ہے

مگر یہ نو نہال چار سال کا
اشاروں سے ہی بات کرنا جانتا ہے، کیا کروں ؟

اسے کسی سپیشلسٹ کے پاس لے کے جایئے

یہ میں تھا چار سال کا

مری زبان بند تھی
کلام مجھ سے جیسے چھن گیا تھا پہلے دن سے ہی
جو دو برس کا مجھ سے چھوٹا بھائی تھا

وہ خوب بولتا تھا، پر
نہ جانے کیسے میری جیبھ گُنگ تھی
میں صم بکم تھا، بے زبان، دم بخود
کہ۔جیسے چُپ کا روزہ رکھ کے جی چکا تھا

چار سال کی یہ عمرِ مختصر

عجیب معجزہ ہوا کہ ایک دن
میں اپنے گھر کی ڈیوڑھی میں صم بکم کھڑا ہوا
تماشہ دیکھتا تھا اک جلوس کا
عَلم اٹھائے جس میں لوگ ’’یا حسین‘‘ ’’یا حسین‘‘ کہتے
سینہ پیٹتے، لہو لہان جا رہے تھے
اور میں ۔۔۔۔۔۔جسے

زبان آوری کا کچھ پتہ نہ تھا
نہ جانے کیسے اس سکوت کے اندھیرے غار سے

نکل کے بول اٹھا۔۔۔
’’حسین! یا حسین! یا حسین‘‘

اور پھر مرا سکوت
نطق میں ، کلام میں ، سخن میں ڈھل گیا۔۔۔۔

میں صاف بولنے لگا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
(لکھنؤ میں سُنی ہوئی ایک سچی کہانی کی شعری داستان)


Related Articles

پیار کرنے کے سو آسان طریقے

وجیہہ وارثی: میں نے اپنی تمام خواہشیں یکجا کیا
اخراجات کے کفن میں لپیٹ کے دفن کر دیا

ہم سکول جانے سے ڈرتے نہیں اور دیگر عشرے (ادریس بابر)

ع / ہم اسکول جانے سے ڈرتے نہیں در اصل عربی تلواروں کے گهیرے میں بہت اونچی شلواروں کے گهیرے

ہم بارانی لوگ ہیں

ہم بارانی لوگ ہیں
وہ نہیں جانتے
ہم اپنے کھیتوں، موسموں اور قبرستانوں کو کبھی نہیں چھوڑتے
جڑی بوٹیوں کی طرح
فصل در فصل اگتے رہتے ہیں