تحقیق کا سائنسی طریقہ کار

تحقیق کا سائنسی طریقہ کار

سائنسی تحقیق :

جستجو یاتجربہ جس کا مقصود ہوتا ہے۔کسی چیز کی تلاش اور حقیقت کی وضاحت، پرانے نظریات کی نئے حقائق کی روشنی میں از سر نو چھان پھٹک اور جدید نظریات کی تطبیق یہ تمام چیزیں سائنسی تحقیق کی اساس ہیں۔ اس کے علاوہ نئی معلومات کو جمع کرنے کا وہ طریقہ جس سے نئے حقائق سامنے آئیں یہ بھی سانئسی تحقیق میں شامل ہے۔

بنیادی طور پرسائنسی تحقیق کے طریقہ کار کے مندرجہ ذیل چار مدارج ہیں :
1-Observation
2-Hypothesis
3-Testing
4-Predictions

یہ چاروں اقدامات کسی بھی تحقیق میں متواتر چلتے رہتے ہیں، مثلاً اگر اس سائنسی طریقہ کار سے کسی موضوع پر اولین صورت میں غور کر کے اس پر چند ایک مفروضات قائم کر لئے گئے، پھر ان مفروضات کی جانچ کی گئی اور اس کے نتیجے کے طور پر اس پیشن گوئی پر پہنچنا ممکن بھی نظر آیا کہ اس پورے عمل سے حقائق کا اظہار ہو رہا ہے، تو بھی اس کے باوجود ایک محقق کے لئے یہ ضروری ہوتا ہے کہ وہ Predictionsکی منزل سے دوبارہ حاصل شدہ نظریہ کے مفروضات کی جانچ کرے اور اس چانچ کے دوران صحیح اور غلط نتائج پر از سر نو غور کرے۔ اس سے یہ سلسلہ سائنسی تحقیق میں مستقل جاری رہتا ہے تاکہ بدلتے ہوئے حقائق پر ایک محقق کی گرفت کمزور نہ پڑے۔ اگر تجربات کے ذریعے مفروضات سے کسی حقیقت کا اظہار ہوتا ہے،تو وہ اولین صورت میں ایک قانون یا نظریہ کی شکل اختیار کر لے گا، لیکن اگر مفرضات سے حقائق کا اظہار نہ ہو سکاتو اس سے مفروضات کا رد ہونا طے ہے یا پھر دوسری صورت میں ان مفروضات کی دوبارہ جانچ کے عمل کو دہرایا جائے گا۔ سائنسی طریقہ کار کا صحیح طور پر استعمال کیا جائے تو حقیقت تک رسائی بلا شبہ ممکنہ حد ہوجاتی ہے، لیکن اگر اس طریقہ کار کے استعمال کے باوجود بھی حقائق تک رسائی ممکن نہ نظر آئے تو ایک محقق کے لئے ضروری ہے کہ وہ اپنے مفروضات پر غور کرے۔ آیئے اب چاروں اقدامات پر ایک اجمالی نظر ڈالتے ہیں جس سے ان کے اصل معنی تک رسائی حاصل ہو سکے۔

Observation:
اس کے لغوی معنی مشاہدہ ہیں۔ اس ضمن میں حقائق کو اولین صورت میں جاننے اور سمجھنے کا عمل ہوتا ہے۔ جس سے حقائق کو ادراک کی کسوٹی پر کسا جاتا ہے۔ مشاہدہ سے کسی بھی حقیقت تک رسائی نہیں ہوتی بلکہ یہاں سے حقائق کو جاننے کی جستجو بیدار ہوتی ہے۔ مشاہدے کے عمل کے بعد ہی حقائق کو جاننے کے ماخذات کی جانب قدم بڑھایا جاتا ہے۔ سائنسی تحقیق میں Observationکو اول اول دو خانوں میں تقسیم کیا جاتا ہے جسے اصطلاحاً Use full Observationاور Not Use Full Observationکہا جاتا ہے۔ اس میں سوالات کو دو خانوں میں بانٹاجاتا ہے۔Use Full Observationکے سوالات سے ایسے مفروضات قائم ہوتے ہیں جن سے نتائج کے حصول کی امید ہوتی ہے اور دوسری صورت میں Not use full Observationوہ ہوتی ہے جس سے کسی نئے نتیجے پر پہنچے کے امکانات بہت کم ہوتے ہیں۔ اس سے ایسے مفرضات پیدا ہوتے ہیں جن پر پہلے ہی کئی محققین غور کر چکے ہوتے ہیں۔

Hypothesis:

مفروضہ جو مشاہداتی اور تجرباتی نتائج کی جانچ کے لیے ہو۔ اچھے مفروضے کی جانچ تجربہ اور احتساب سے کی جا سکتی ہے۔اس میں بہت غور و فکر اور مطالعہ درکار ہوتا ہے۔مشاہدے سے مفروضے تک غور و فکر کا عمل از حد ضروری ہے، کیوں کہ اسی کی بنیاد پر کسی نو ع کا تحقیقی کام اگلی منزل کی طرف بڑھتا ہے۔ مفروضے کی ایک واضح تعریف مندرجہ ذیل ہے:

  1. an assumption or concession made for the sake of argument
  2. an interpretation of a practical situation or condition taken as the ground for action
  3. a tentative assumption made in order to draw out and test its logical or empirical consequences
  4. the antecedent clause of a conditional statement
    (Merriam-Webster Dictionary: Definition of Hypothesis, Since 1828, merriam-webster.com)

مفروضے کی تعریف کو جاننے کے بعد ایک سب سے اہم بات یہ سمجھ میں آتی ہے کہ سائنسی تحقیق میں کسی بھی ایسے مفروضے کو قابل قبول نہیں سمجھا جا سکتا جس کی بنیاد پر منطقی اور تجزیاتی نوعیت کے اشکالات سے بحث نہ کی جا سکے۔ کوئی بھی مفروضہ اسی صورت میں مفروضہ ہوتا ہے جب اس کے نتائج خواہ وہ نظریہ اور قانون کی شکل اختیار کریں یا نہ کریں پر اپنی اولین صورت میں غیر منطقی اور غیر تجزیاتی نہ ہوں۔ مفروضہ سائنسی تحقیق کا سب سے بنیادی عنصر ہے جس کی بنیاد پر کسی بھی نظریہ کی تشکیل کا دار و مدار ہوتا ہے۔

Testing:

جانچ کاکام نتائج کی بنیاد پر کیا جاتا ہے اور نتائج کا تجریہ اس ضمن میں سب سے زیادہ اہمیت رکھتا ہے۔صحیح تجزیہ ہی مفروضے کو صحیح یا غلط ثابت کرتا ہے۔حالاں کہ کوئی بھی مفروضہ پوری طرح غلط ثابت نہیں ہوتا ,لیکن پھر بھی صحیح تجزیہ سے مفروضے کے اہم حصوں کے درست اور نا درست ہونے کا ادراک ہو جاتا ہے۔ اس ضمن میں اس بات کو مد نظر رکھنا سب سے زیادہ اہم ہوتا ہے کہ جن حصوں کے غلط ہونے کا ادراک ہو جائے اس پر ازسر نو کام کرنے کی ضرورت ہوتی ہے۔ یہ ہی جانچ کا اصل مقصد ہے۔

Prediction:

اس کا اردو ترجمہ حالاں کہ پیشن گوئی ہے۔ پھر بھی اس کی تعریف کو ہم یوں سمجھ سکتے ہیں کہ یہ ایک قسم کا اعلان ہے جو پہلے سے کسی بات کی نشان دہی کرتا ہے۔ خاص کر مشاہدے، تجربے اور سائنسی بنیادوں پر۔

ان چار بنیادی باتوں کے علاوہ سائنسی تحقیق کے عمل میں ہمیں چند ایک اہم باتوں کی جانب بھی اپنی توجہ مرکوز رکھنی چاہیئے جس سے سائنسی تحقیق کا براہ راست تعلق ہے۔ ایسی بنیادی باتیں مندرجہ ذیل ہیں :
٭ predictionحالاں کہ آخری مرحلہ ہے پر اس کی بھی مفرضے کے خلاف چانچ کی جا سکتی ہے۔
٭ اس پورے عمل کو ریاضیاتی انداز میں برتنے کی ضرورت ہوتی ہے تاکہ حاصل کے طور پر کسی بھی طرح کا Prediction
غلط ثابت نہ۔ اس لیے سائنسی تحقیق کا عمل ریاضیاتی عمل سے مشابہ ہوتا ہے۔
٭ یہ بات سب سے اہم ہے کہ کسی بھی موضوع کے تمام مسائل کو حل کرنے کی کوشش میں وقت برباد نہیں کرنا چاہیئے، اس کے بر عکس اپنے موضوع پر گرفت رکھتے ہوئے اس سے متعلق چھوٹی چھوٹی باتوں پر نظر رکھنا چاہیئے۔ چھوٹی چھوٹی باتیں آخر میں جا کر بہت اہم ثابت ہوتی ہیں۔
٭ اگر کسی طور مفروضہ ناکام بھی ہوجاتا ہے تو اپنی تحقیق کی رپورتاژ ضرور مرتب کرنا چاہیئے تاکہ اس موضوع پر کام کرنے والے اگلے محقق کو اس تجربہ سے روشنی حاصل ہو سکے۔
٭ اس رپورتاژ کو ایسے مرتب کیا جانا چاہیئے تاکہ مستقبل میں اس سے کام لیا جا سکے۔

آخر میں یہ بات بھی بہت اہم ہے کہ اردو میں ان اصولوں کی روشنی میں ہونے والے تحقیق کام بہت کم ہیں، جس کے بر عکس مغرب میں ان اصولوں کو نہ صرف یہ کہ وضع کیا گیا ہے بلکہ ان کو تحقیق پر Applyبھی کیا گیا ہے۔ سائنسی تحقیق کے طریقہ کار کو اردو زبان و ادب سے متعلق طلبہ کو جاننے اور سمجھنے کی ضرورت ہے تاکہ آئندہ نسل اس امر کی تلافی کر سکے۔

Did you enjoy reading this article?
Subscribe to our free weekly E-Magazine which includes best articles of the week published on Laaltain and comes out every Monday.
Taleef Haider

Taleef Haider

Taleef Haider is a student of M. Phil. Urdu at Jawahar Lal Nehru University. He is a poet and has written many critical essays for various literary magazines.


Related Articles

انسان اور درخت

سنہری ڈائری میں تقدیر کے کیےایک اور ستم کو دفناتے وہ شاید بہت تھک چکا تھا اسی لیے فرار چاہتی نگاہوں کے ساتھ اپنے سامنے کھڑے درختوں کو تکنے لگا

کمرہ امتحان سے؛ مسائل ، شکایات اور مطالبات

لاہورسمیت پنجاب بھر میں جاری ہائیر سیکنڈری سکول امتحانات کے دوران کمرہ امتحان میں طلبہ کو درپیش مسائل پر لالٹین کی خصوصی رپورٹ

گجرات یونیورسٹی کے پروفیسر کا قتل؛ مشتبہ افراد کی تلاش جاری

رواں ہفتے گجرات یونیورسٹی کے پروفیسر اور سٹوڈنٹ سروسز ڈائریکٹر شبیر حسین شاہ کی نامعلوم افراد کے ہاتھوں ہلاکت کے بعد مقامی قانون نافذ کرنے والے اداروں کی طرف سے ہاسٹلز اور ہوٹلز میں مشتبہ افراد کی تلاش کا عمل جاری ہے۔