Slide background

!شعر اور اس کی تشریح

اجمل جامی

Slide background

ایک نامعلوم صوبے کی دریافت

  یاسر شہباز  

Slide background

اسلامی جمہوریہ آف بحریہ ٹاون

عظمت ملک

Slide background

 "برق گرتی ہے تو بے چارے غریبوں پر "

علی احمد

Slide background

  بینائی  

  نعمان اسحاق  

Politics & Current Affairs

View all posts

Education

View all posts

International

View all posts

روہنگیا بحران کے سیاسی و مذہبی محرکات

پناہ گزینوں کے لیے اقوام متحدہ کے کمیشن(UNHCR) کی رپورٹ کے مطابق برما کی ریاست راکھائن میں 800,000روہنگیا برادری رہتی ہے ۔

اپنے ہندوستانی ہمسائے کے لیے محبت کے ساتھ

اس وقت جب دونوں جانب کے سیاستدان اور فوجی قیادت ایک دوسرے کو کھلی جنگ اور منہ توڑ جواب دینے کی دھمکیاں دے رہے ہیں امن کی بات کرنے کا اس سے مناسب اور ضروری وقت کوئی نہیں ہو سکتا۔ دو

ڈگریاں برائے فروخت- دوسرا حصہ

پہلی نظر میں ایگزیکٹ کی درسگاہوں میں ہرطرح سے مکمل معلومات کی حامل ویب سائٹوں، رابطے کے لیے دیے گئے مفت امریکی نمبروں اور ہوشیاری سے منتخب کردہ(حقیقی ناموں سے ) ملتے جلتے ناموں جیسے برکلے، کولمبیانا اور ماونٹ لنکن وغیرہ جیسی سطحی مشابہت ہی دکھائی دیتی ہے۔

Society

View all posts

History

View all posts

مقامات مقدسہ کا انہدام اور مجرمانہ خاموشی

ہرسال حج کے لیے آنے والے یاتریوں کی بڑھتی ہوئی تعداد کے پیش نظر ” تقدس اور روحانیت میں ملبوس صحرائی شہر” اب فلک بوس عمارتوں ، شاپنگ مالز اور پرتعیش شاندار ہوٹلوں پر مشتمل ایک جدید شہر میں تبدیل ہوتا جارہا ہے ۔

The Politics of Sectarian Division of Islam

From Shia-Sunni senseless killings in Pakistan and elsewhere to the increasing void across the divide, many Shias and Sunnis believe in all sincerely-misguided belief that doing so are meant to please Allah.

مجلس احرار سے مولوی عبدالعزیز تک

آخر کیا وجہ ہے کہ پاکستان میں سیاست دانوں کے عوامی بیانات و تقاریر پر بہت زیادہ حساسیت پائی جاتی ہے ؟ان کے ایک ایک لفظ کو حب الوطنی کی چھلنی میں سے انتہائی باریک بینی سے گزارا جاتا ہے جب کہ دوسری طر ف نام نہاد دین فروشوں کے بدترین اور متنازعہ ترین بیانات بھی عوامی احتجاج کو اکسانے میں ناکام رہتے ہیں۔

بھٹو کی پھانسی اور ہمارا ادب

4 اپریل 1979 ہمارے سماج میں جہاں سیاست کے اندر ایک مستقل تلخی گھولے جانے کا عکاس ہے وہیں یہ دن ہمارے ادب کو نئی جہت ملنے کی عکاسی بھی کرتا ہے۔ میں جب اس حوالے سے اپنی یادوں کو کھنگالتا ہوں تو مجھے یاد آتا ہے کہ ڈاکٹر فیروز صاحب نے ایک مضمون اس وقت کے معروف جریدے پاکستان فورم میں لکھا تھا اور اس کا عنوان تھا ‘بھٹو فیلیا، لوگ بھٹو سے محبت کیوں کرتے ہیں’۔ یہ مضمون اگرچہ سیاسی غرض سے لکھا گیا تھا مگراس میں ادبی چاشنی موجود تھی۔